Monday, 7 September 2015

Sufi Raqs (Dance) or Wajd (Ecstasy) or Hadra in light of Shariah



Sufi Raqs (Dance) or Wajd (Ecstasy) or Hadra in light of Shariah 








CONTENTS:
PART 1: VIDEOS
PART 2: BOOKS AND ARTICLES
PART 3: ENGLISH ARTICLE
PART 4: URDU ARTICLE

PART 1: VIDEOS
ENGLISH VIDEO: 032 Wajd | 17mins 59secs

URDU VIDEO: 059 ( Sahih Bukhari) Raqs Wa Wajd Karne Ka Saboot Hadiths Se | 46mins 29secs

URDU VIDEO: 066 ( Sahih Bukhari) Hazrat Aisha(r.a) Ka Habshiyo Ko Raqs Karte Dekhna | 4mins 4secs

URDU VIDEO: 067 ( Sahih Bukhari) Samaa Per Hadith | 11mins 1sec

ENGLISH VIDEO: Imam Ibn Quddama (Great Grand Shaykh of Ibn Tayyimah) on Ecstasy (Wajd) | 47 MINS 35 SECS
                         
ENGLISH VIDEO: Raqs by Sahaba(r.a) | 42 MINS 22 SECS

ENGLISH VIDEO: Even the animals, mountains and Buraaq use to dance in the Love of Huzur(saw) | 10 MINS 4 SECS

ENGLISH VIDEO: Ibn-e-Kathir on Sufi Wajd Dance in Mehfil-e- Sima on Mawlid | 1 MIN 38 SECS

URDU VIDEO: Ishq e Nabi Main Raqs(jhaamna) | 7 MINS 13 SECS

ENGLISH VIDEO: Sahaba dancing around the Prophet (pbuh)_ proven by the Sunnah from Sahih Hadeeth | 9 MINS 57 SECS

ENGLISH VIDEO: Sufi Whirling Wajd Proven from Authentic Hadith | 9 MINS 51 SECS

URDU VIDEO: DrTahir ul Qadris Official Statment about Tampering with Video of Mahfil e Samaa-Sufi Dance | 9 MINS 41 SECS


PART 2: BOOKS AND ARTICLES
ENGLISH BOOK: Music and Wajd (Ecstasy) by Imam Gazzali (rah) [D. 505 A.H] | PAGES: ABOUT 140

URDU BOOK: Aqsam e Wajd | PAGES: 46

URDU BOOK: Dhamal ka Jawaz | PAGES: 48

URDU BOOK: Masla e Wajd per fatwa | PAGES: 27      

URDU BOOK: Wajd per ilmi dalail | PAGES: 50

ENGLISH BOOK: The ‘Dancing’ of the Sufis By Shaykh Ahmad ibn Muhammad ibn Ajibah al-Hasani | PAGES: 3

URDU BOOK: Isbat ul Samaa | PAGES: 50

ENGLISH BOOK: SAMA IN SUFISM BY Dr. JAVAD NURBAKHSH | PAGES: 21

Samaa

In Defense of the Whirling Prayer Ceremony (Sema) By Ibrahim Gamard

Questions about the Hadra

Why did Sahaba dance in the presence of the Holy Prophet (صلى الله عليه وسلم)?







PART 3: ENGLISH ARTICLE
Wajd or Ecstasy is a gift of Allah for muslims in which they lose control of their body due to love of Allah and his Prophet [salehalawaalihi wasalam] when Noor of iman coming from Heart of Prophet Muhammad [salehalawaalihi wasalam] which He gave to Sahabas [radhiallahanho] from Sahabas [ra] it reached the Salafs and from Salafs to Awliyas [rah] and from Awliyas to us even in this time period, which this Noor goes into their heart and when their body worships Allah [swt] they lose control of themselves

Wajd is of different types and every type has different affects some are listed below:
1) Some times the condition of Wajd becomes so strong that a muslim loses complete control of his body and starts involuntary movements which look like dancing or running.
2) Some times a muslim goes in Wajd but sits quietly , his mind or body is not longer in normal state or in his control but he sits quietly
3) Some times a muslim falls down and becomes unconcious in this condition. Below proofs even show Sahabas [ra] and Salafs [rah] who died in such a state in deep love of Allah

What is Prohibitted
1) Intentional dancing with Non Mehrams [women] or just to show off is forbidden .
2) Similarly dancing seen in bollywood movies and songs and vulgular ones is totally haram .Although you will see that Wahabi scholars like Albani have even allowed women dancing infront of other women and her husband

The dancing of sufis in wajd,ecstacy or swoon in which a person loses control of his body in love of Allah swt in a mehfil of zikr, and wajd is unintentional , a person has no control on himself so whatever he does shariah allows it, as Sahabas (Ra) also went into it.

Wajd is of different forms and is only from Allah whoever Allah wills he blesses him with the kafiyat for a few secs, mins, even hours:
Some people don't move at all or stand up but just sit quietly in wajd [their body,mind nothing is in their control ] , they sometimes shiver too , If one listens to Quran recitation he may experience it.
Some people may fall down to ground and go into a trance during wajd , they may shiver too.
Quran states about this type of wajd, Hadrat Musa [alehislam]
YUSUFALI:” When Moses came to the place appointed by Us, and his Lord addressed him, He said: "O my Lord! show (Thyself) to me, that I may look upon thee." Allah said: "By no means canst thou see Me (direct); But look upon the mount; if it abide in its place, then shalt thou see Me." When his Lord manifested His glory on the Mount, He made it as dust. And Moses fell down in a swoon. When he recovered his senses he said: "Glory be to Thee! to Thee I turn in repentance, and I am the first to believe." (Qur’an 7:143)
Dictionary meaning of the word Swoon :
“to enter a state of hysterical rapture or ecstasy”
                                          
Some people experience a more intense form of Wajd in which they stand up, start moving ,running [which may seem like a dance]


THE SUFI RAQS (DANCE) IN LIGHT OF SHARIAH
There has been some controversy lurking around regarding legitimacy of the Sufi Raqs (dance) or Hadra as it is called in Arab world which is practiced by eminent Sufis and Mashaikh. People who carry deep Bughz (hatred) for Sufis are often seen spreading propaganda that Sufis are dancers and they have nothing to do with Shariah, but what they forget is that they have no proof whatsoever from Quran and Sunnah on “NAFI” of Raqs whereas we have overwhelming proofs which establish Raqs directly from hadith itself, even absence of Nafi is itself a proof of it being allowed and it cannot be declared haram until proven otherwise.

PROOF # 1

عن أنس قال: «كانت الحبشة يزفنون بين يدي رسول الله صلى الله عليه وسلّم ويرقصون ويقولون: محمد عبد صالح ، فقال رسول الله صلى الله عليه وسلّم: ما يقولون؟ قالوا: يقولون: محمد عبد صالح

Translation: It is narrated by Anas (R.A) that the Habashis were presenting their art in front of the Prophet (صلى الله عليه وسلم) and “THEY WERE DANCING (Yarqasun)” while saying: Muhammadun Abdun Salih (i.e. Muhammad صلى الله عليه وسلم the righteous slave). The Prophet (صلى الله عليه وسلم) asked: What are they saying? They said: Muhammadun Abdun Salih
[Musnad Ahmed bin Hanbal, Volume No.3, Page no. 152]

Sheikh Shu’ayb al Arna'ut said after this hadith:
إسناده صحيح على شرط مسلم
Translation: The Chain is “SAHIH” on the criteria of “(SAHIH) MUSLIM” [ibid 3/152]

Note: This hadith explicitly uses the word "RAQS” which proves without any shadow of doubt that It was dancing, however the Anti-Sufi people cite the hadith of Bukhari which only mentions “PLAYING”

Some people claim that this above hadith is only understood from hadith of Bukhari which mentions Abyssinians or Ethiopians "PLAYING WITH SPEARS" inside the Prophet's mosque. Now our reply to them is the same i.e. the hadith of Bukhari is understood from the hadith of Musnad Ahmed which is Sahih on criteria of Sahih Muslim, hence both playing and Raqs become allowed, If they are truthful then they should come with proof from hadith which mentions that Raqs is “EXCLUDED” from this. Therefore Alhamdolillah both ahadith go in favour of Sufis.

Imam Nawawi (rah) on Above hadith said:
with commentary by Muhammad Shirbini Khatib It is not prohibited to dance ((Shirbini ) which is not unlawful because it is only motions made while standing or bowing. Furani and others have expressly stated that neither is it offensive, but rather, is permissible, as is attested to by the hadith related in the Sahihs of Bukhari and Muslim that the Prophet (Allah bless him and give him peace) stood before ‘A’isha (Allah be well pleased with her) to screen her from view so that she could observe the Abyssinians sporting and dancing) – unless it is languid, like the movements of the effeminate
 (Mughni al-muhtaj ila ma’rifa ma’ani alfaz al-Minhaj (y73), 4.430)

IMAM IBN HAJAR AL-HAYTAMI (RAH) COMMENTS OVER ABOVE HADITH:
Beating the kuba is prohibited… BUT DANCING ISN’T, BEING NEITHER PROHIBITED NOR OFFENSIVE, BECAUSE IT IS ONLY MOTIONS MADE WHILE STANDING OR BOWING, and further because he (sallallahu alayhi wa sallam) consented to the Abyssinians doing so in his mosque on the day of Eid, as related by Bukhari and Muslim.
The text in capital letters is from the Minhaj of Imam Nawawi while the rest is Ibn Hajar’s commentary [Tuhfa al-Muhtaj fi Sharh al-Minhaj]

Now how many other imams [rah] of Hadith used the word Raqs "Dance" although a Salaf is enough proof in this case but still:
1: Imam Tabarani [rah] used the word Raqs [dancing] Reference: Hadith #3 on page 121, Volume 9
2: Imam Nisai [rah] in Sunan Al Kubra using the word Dance "RAQS"] in page # 309, Vol 5 with same Sahih chain and says:
“that the Abysinians were standing in front of the door of the Holy Prophet e’s house and were ‘ecstatically dancing’ or performing raqs on anticipation of seeing the Holy Prophet Muhammad (saw)”
3: Imam Zamakshari also explained the same haditth with a Sahih chain calling it Raqs , And said Qala al zafaru Al Raqs The word in the hadith means Raqs
4: Imam Suyuti [rah] in[ Sharh Sahih Bukhari pg 123, Al hajl Al tawseeh] said " Al hajalo al raqs biha til maqstatin "
5: Imam Juhri [in kitab ul lugat pg 46] Says Al zafl wa Raqs
6: Imam murtaza Zubaide [rah] in Taj us uloom kitbah ul lugat ] says " Zafana zasfun zafana ie. It Stands for Raqs [dance]
7: Imam Ibn Manzoor [in lisan ul arab, most authnetic book of lugat pg 135 ] says Al Zafl Al Raqs (i.e it means Raqs )
8: Imam Nabawi [rah] writes in sharh sahih muslim pg 347 says Mana hu yarqusoon (i.e they did Raqs)
9: Qadi Iyad [rah] said in [sarh sahih muslim pg 429 ] Al zabl hu wal raqs

SO IJMA OF IMAMS [RAH] AGREED ITS RAQS [DANCING] WHAT CAME FROM SAHIH HADITH INCLUDING IMAM AHMED BIN HANBAL [RAH] WHO WAS A SALAF HIMSELF.


PROOF # 2
أتيت النبي ‏ ‏صلى الله عليه وسلم ‏ ‏وجعفر ‏ ‏وزيد ‏ ‏قال ‏ ‏فقال ‏ ‏لزيد ‏ ‏أنت ‏ ‏مولاي ‏ ‏فحجل ‏ ‏قال وقال ‏ ‏لجعفر ‏ ‏أنت أشبهت خلقي وخلقي قال ‏ ‏فحجل ‏ ‏وراء ‏ ‏زيد ‏ ‏قال وقال لي أنت مني وأنا منك قال ‏ ‏فحجلت ‏ ‏وراء ‏ ‏جعفر
Translation: Hadrat Ali (ra) said: I went to the Prophet (Peace be upon him) with Jafar (RA) and Zayd (ra), The Prophet said to Zayd: You are my freedman (anta Mawlay), “AT THIS ZAYD BEGAN TO HOP ON ONE LEG (HAJALA) AROUND THE PROPHET” then the Prophet  said to Jafar (ra): You resemble me in my creation and my manners, at this Jafar also began to hop behind Zayd, then the Prophet said to Ali (ra): You are from me and I am from you, at this he also started to hop behind Jafar.
[Musnad Ahmed bin Hanbal 1:537 #857]


Imam Ahmed Bin Hambal R.A


Musnad Ahmed bin Hanbal, Volume No.1, Page no. 537, Hadith No 857



More References of this Hadith:
Ash-Shākir declared it authentic in his review of the Musnad.
 Al-Bazzār in his Musnad with a sound chain according to Imām Al-Haythamī in his Majma’ Az-Zawā’id (5:157).
Also reported by Imām Al-Bayhaqī in his Sunan Al-Kubrā (8:6 #15548, 20816)
as well as Ibn Abī Shaybah in his Musannaf.
Ibn Sa’ad reported this in Mursal form in his Tabaqāt, 4:22.

1: As you can clearly see in the scan proof that Shaykh Ahmed Shakir (a renowned salafi authority of past) has accepted this hadith to be "SAHIH (AUTHENTIC)" , so this hadith proves from the acceptance of Prophet (Peace be upon him) and Amal of great Sahaba like Zayd (ra), Jafar (ra) and Mawla Ali (ra) that doing Raqs is fine.

2: Shaykh ul Islam Ibn Hajr Haythami (rah) said:
“All narrators are those of Sahih (رجاله رجال الصحيح)“
 [Majma’ Az-Zawa’id, Volume 005, Page No. 157]

3: Imam al Hafidh al Bayhaqi (rah) in explanation of this hadith said:
وفي هَذَا إنْ صَحَّ دلالةٌ على جوازِ الحَجْلِ، وهو أَنْ يَرْفَعَ رِجْلاً ويَقْفِزَ على الأُخْرَى مِنَ الفَرَحِ، فالرقصُ الَّذِي يكونُ عَلَى مِثَالِهِ يكونُ مِثْلَهُ في الجوازِ. والله أعلمُ
Translation: “In this (hadith) if sahih has “PROOF” and "PERMISSIBILITY" of hopping (dancing) which includes “RISING UP OR JUMPING IN STATE OF JOY” and also that of doing “RAQS” being similar to it which is also allowed – And Allah knows the best”
 [Sunnan al Baihaqi al Kubra (15/333)]

Imam Bayhaqi also states in Shu’yb ul Imaan:
وأما الرقص فإن لم يكن فيه تكسر وتخنث فلا بأس فإنه روي أن رسول الله صلى الله عليه وسلم
قال لزيد أنت مولانا فحجل وهو أن يرفع رجلا ويقفز إلى الأخرى من
الفرح وقال لجعفر أشبهت خلقي وخلقي فحجل                            
Translation: “As regarding “Raqs” If it does not include going wild and one does not act like the women then “THERE IS NO HARM IN IT” as the Prophet (Peace be upon him) said to Zayd (ra): You are my freedman (anta Mawlay), at this Zayd began to hop on one leg (hajala) around the Prophet (Peace be upon him), and he did this in joy, then the Prophet (Peace be upon him) said to Jafar (ra): You resemble me in my creation and my manners, at this Jafar also began to hop behind Zayd”
 [Shu’yb ul Imaan, Volume No.4, Page No. 483-484]

4: Imam Ibn Hajar Asqalani (rah) said :
 “YES! VERILY JA’FAR IBN ABI TAALIB RADHIYA ALLAHU ‘ANHU DID RAQS IN THE PRESENCE OF RASULULLAH when he told Ja’far ‘You resemble me in my created form and in my character.’ It would have been necessary for the Nabi (alayhis salaam) to clarify whether it was halaal or haraam, yet the Nabi (’alayhis salaam) did not reject it. This is known in Mustalah Al-Hadith as “Iqraar“, or the acceptance and approval of the Prophet Muhammad(pbuh) . And the Nabi (’alayhis salaam) would not have remained silent regarding the Haraam (forbidden) or the Makruh (hated).”
Reference:
Shaykh Yusuf Khattaar Muhammad references As-Suyuti’s quote from As-Sayf Al-Qaati’ and also Al-Ilhamaat Al-Ilhiyah of Shaykh Mahmuh Abi Shaamaat; See the Maws’uah page 185 published in Damascus in 1999, third edition

5: Imam Jalal ud din Suyuti [rah]proves Raqs [dancing] in Love of Allah from Quran and also from the above Hadith:
Imam Jalal al-Din Suyuti (rah) was asked for a Question “a group of Sufis who had gathered for a session of dhikr,” and he replied:
وكيف ينكر الذكر قائما والقيام ذاكرا وقد قال الله تعالى (الذين يذكرون الله قياما وقعودا وعلى جنوبهم) وقالت عائشة رضي الله عنها كان النبي صلى الله عليه وسلم يذكر الله على كل أحيانه، وإن انضم إلى هذا القيام رقص أو نحوه فلا إنكار عليهم فذلك من لذات الشهود أو المواجيد وقد ورد في الحديث رقص جعفر بن أبي طالب بين يدي النبي صلى الله عليه وسلم لما قال له أشبهت خلقي وخلقي وذلك من لذة هذا الخطاب ولم ينكر ذلك عليه النبي صلى الله عليه وسلم فكان هذا أصلا في رقص الصوفية لما يدركونه من لذات المواجيد وقد صح القيام والرقص في مجالس الذكر والسماع عن جماعة من كبار الأئمة منهم شيخ الإسلام عز الدين بن عبد السلام.
“How can one condemn making dhikr while standing, or standing while making dhikr, when Allah Most High says, “. . . those who invoke Allah standing, sitting, and upon their sides” (Qur'an 3:191). And ‘A'isha (Allah be well pleased with her) said, “The Prophet (Peace Be Upon Him) used to invoke Allah at all of his times” [Sahih Muslim, 1.282: 373]. And if dancing is added to this standing, it may not be condemned, as it is of the joy of spiritual vision and ecstasy, and the hadith exists [in many sources, such as [Musnad al-Imam Ahmad, 1.108, with a sound (hasan) chain of transmission] that Ja‘far ibn Abi Talib danced in front of the Prophet (Peace Be Upon Him) when the Prophet told him, “You resemble me in looks and in character,” dancing from the happiness he felt from being thus addressed.......and the Prophet (Peace Be Upon Him) did not condemn him for doing so, this being a basis for the legal acceptability of the Sufis dancing from the joys of the ecstasies they experience, HENCE IT IS CORRECT TO STAND AND DANCE DURING GATHERINGS OF DHIKR AND SAMA ACCORDING TO A GROUP OF MAJORITY OF SCHOLARS, AMONG THEM BEING SHAYKH UL-ISLAM IZ UDIN BIN ABD AL-SALAAM.

Reference:
Imam Jalal ud din Suyuti (Rahimuhullah) in Al Hawi lil Fatawi, Volume No. 2, Page No. 234 Published by Maktaba al Asriyyah, Beirut, Lebanon.



 Front Cover, Imam Jalal ud din Suyuti (Rahimuhullah)'s Al Hawi lil Fatawi  Maktabba al Asriyyah, Beirut, Lebanon
 


Volume No. 2, Page No. 234, Published by Maktaba al Asriyyah, Beirut, Lebanon.  
 



6: So the Sultan of Ulama i.e. Imam al Hafidh Izz bin Abdus Salaam (rah) allowed Raqs along with “GREAT SCHOLARS” as said by Imam Suyuti (rah) who was himself Mujaddad of his time.

7: Imam Ghazali (rah) in His Ihya reported Same hadith and supported Raqs too:
He [rah] states in his Ihya uloom ud din , vol 2, Pg 179:
لأدب الرابع‏:‏ أن لا يقوم ولا يرفع صوته بالبكاء وهو يقدر على ضبط نفسه ولكن إن رقص أو تباكى فهو مباح فيجوز تحريكه‏.‏
ولو كان ذلك حراماً لما نظرت عائشة رضي الله عنها إلى الحبشة مع رسول الله صلى الله عليه وسلم وهم يزفنون هذا لفظ عائشة رضي الله عنها في بعض الروايات‏.‏
وقد روي عن جماعة من الصحابة رضي الله عنهم أنهم حجلوا لما ورد عليهم سرور أوجب ذلك وذلك في قصة ابنة حمزة لما اختصم فيها على بن أبي طالب وأخوه جعفر وزيد بن حارثة رضي الله عنهم فتشاحوا في تربيتها فقال صلى الله عليه وسلم لعلي ‏”‏ أنت مني وأنا منك ‏”‏ فحجل علي وقال لجعفر ‏”‏ أشبهت خلقي وخلقي ‏”‏ فحجل وراء حجل علي وقال لزيد ‏”‏ أنت أخوناً ومولانا ‏”‏ فحجل زيد وراء حجل جعفر ثم قال عليه السلام ‏”‏ هي لجعفر لأن خالتها تحته والخالة والدة ‏”‏ وفي رواية أنه قال لعائشة رضي الله عنها ‏”‏ أتحبين أن تنظري إلى زفن الحبشة ‏”‏ والزفن والحجل هو الرقص










OBJECTIONS OVER THE HADITH NO: 2
The opponents of raqs argue that this narration is weak for the following reasons:
FIRST OBJECTION: Hani’ ibn Hani’ is Unknown (Mujhool).
SECOND OBJECTION: Abu Is-haaq is Mudallis
We shall respond to these arguments with Allah’s permission.

FIRST OBJECTION: Hani’ ibn Hani’ is Unknown (Mujhool).
REPLY: There is one narrator of this hadith i.e. Hani bin Hani upon whom Salafis do Jarh, now here is comprehensive Ta'deel of him:

Muhaditheen said:

هانئ بن هانئ عن على رضى الله عنه. قال ابن المدينى: مجهول. وقال النسائي: ليس به بأس. وذكره ابن حبان في الثقات

Translation: “Hani bin Hani narrated from Ali (Radhi Allaho Anho). Ibn Mudayni said he is Mujhool. Imam Nasai (rah) said: 
THERE IS NO HARM IN HIM” and Ibn Hibban mentioned him in his “THIQAAT (Reliable narrators)” 
[Mizan ul Aitidal (7/71)]

Note: Remember being Mujhool in sight of some muhadith does not mean the narrator is weak, because all muhaditheen did not know names of all rijal, so If Ta'deel is done by other Muhaditheen and some call him Majhool then the narrator is definitely known (Ma'roof).

A) Imam at-Tirimdhi declared many ahadith from Hani bin Hani as “HASAN SAHIH” 
[Sunnan Tirimdhi Volume No.5, Hadith #3798]

B) Imam Ibn Majah (rah) narrated from him and did Sukoot 
[Sunnan Ibn Majah, Muqadma, Hadith # 143]


C) Imam Ibn Hibban mentioned him in his ”Kitab ul Thiqaat” (5/508)

It is thus radiantly clear that this narration is Sahih, 
as is also stated by Salafi’s leading Muhadith Shaykh Ahmad Shaakir in his Tahqiq of Musnad Ahmad where he said: “Its chain is sound (إسناده صحيح)“ [Musnad Ahmad Volume 001, Page No. 537, Hadith Number 857, FN: 2]

D) Imam al Ajli (rah) said:

1885
ـ هانىء ابن هانىء، كوفي، تابعي ثقة

Translation: Hani bin Hani, Kufi 
“TABI AND THIQA” [Thiqat al Ajli Volume No.1, Page No. 454]

 E) Imam al Haythami (rah) said about ahadith having Hani bin Hani

ورجال أحمد والبزار رجال الصحيح غير هانىء بن هانىء وهو ثقة

Translation: The Rijaal of Ahmed and Bazaar are those of Sahih except Hani bin Hani who is 
“THIQA” 
[Majma az Zawaid (8/102)]

Nasir ud-din Albani the Salafi authority declared ahadith from Hani bin Hani as “SAHIH”
[Sahih Sunnan Ibn Majah by Albani, (1/119)

So the hadith is absolutely sahih and the Jarh Mubham on this narrator is not given any worth.


If we were to confine ourselves to the generally strict conditions of An-Nasaa’i, Al-’Ijli, or Ibn Hibbaan, the argument that Haani ibn Haani is unknown would be irrelevant, as they are attesting to the fact that his situation was in fact known by them. However, this argument does not satisfy our opponents. Imam Al-Bayhaqi in fact reports this narration through another chain that definitely removes any doubts pertaining to Haani Ibn Haani:
قَالَ أَبُو إِسْحَاقَ وَحَدَّثَنِى هَانِئُ بْنُ هَانِئٍ وَهُبَيْرَةُ بْنُ يَرِيمَ عَنْ عَلِىِّ بْنِ أَبِى طَالِبٍ
Abu Is-Haaq said “and Haani ibn Haani, as well as Hubayrah ibn Yareem, narrated to me from ‘Ali ibn Abi Taalib…”
Not only did Abi Is-Haaq narrate this from Haani ibn Haani, but this story was also narrated to him by Hubayrah ibn Yareem.
Regarding this supporting narrator, Hubayrah ibn Yareem, then he was a Taabi’i, just as Haani ibn Haani, and a student of Sayyidunaa ‘Ali ibn Abi Taalib (radhiya Allahu ‘Anhu).
Al-Athram reports from Imaam Ahmad the following regarding him, “There is no problem with his narrations…”.
Ibn Hibbaan mentions him in his Ath-Thiqaat.
Imaam An-Nasaa’i has contradictory statements reported from him. For example he states, “Not strong in hadith” and in Jarh wa Ta’dil he states, “We hope that there was nothing wrong with his [reports].”
Ibn Ma’in stated he was Majhul (unknown) while Ibn Khurrash said he was “Dha’if (weak)”. Ibn Hajr Al-’Asqalaani concludes in his Taqrib, “There is nothing wrong with him, he faulted in his shi’ism.”
A point that further supports this connection between Abu Is-haaq and Hubayrah ibn Yarim is that Hubayrah ibn Yareem was the Uncle of ‘Aaliyah the wife of Abu Is-haaq as is mentioned in Tahthib At-Tahthib, Tahthib Al-Kamaal and elsewhere.
((See 6552 of Tahthib Al-Kamaal of Al-Mizzi ))

From what has just been presented, Haani ibn Haani was declared known as well as impeccably trustworthy by Ibn Hibban, Al-’Ijli, and An-Nasaa’i. This fact would be enough to suffice many, however, it does not suffice some. So in response, we say that that there is a follow up reported in the place of Haani ibn Haani, and that is Hubayrah ibn Yarim, who is good in narrating according to Imam Ahmad, Ibn Hajr, Ibn Hibbaan and others. Based upon this, it is clear that the aspersion cast upon Haani ibn Haani is one that is null.

SECOND OBJECTION: Abu Is-haaq is Mudallis
REPLY:  The second aspersion is that Abu Is-haaq As-Sabi’i is Mudallis. Our response is as follows:
1) Abu Is-haaq is a Kufan Tabi’i who is impeccably trustworthy as stated by Imam Al-’Ijli. He was declared thiqah by Imam Ahmad ibn Hanbal, An-Nasaa’i, Ibn Ma’in, Shu’bah, and others. He is used in both Bukhaari and Muslim’s Sahihs.
2) It is true that he committed tadlees. An example of Tadlees, briefly, is when a narrator uses the vague form of narrating – ‘An meaning ‘from’ – without stating if they heard it or if it was narrated directly to them from the Shaykh they are reporting from. If a narrator is Mudallis (one who commits tadlees) he must state that he heard it or that it was narrated to him in order for his reports to be acceptable in themselves. This ruling has been stated by the famous master of Hadith Ibn As-Salaah when he said that if the Mudallis (the one who makes tadlees) reports that he heard something, then it is acceptable. Whereas, if they mention the phrase ‘An then the ruling is the ruling of Mursal (i.e. they are not naming who they have really heard it from). And Az-Zayn said, “And this is what has been said by many [of the scholars of hadīth]. [See At-Tanqeeh Al-Anthaar Al-Matboo’ Ma’a Tawdeeh Al Afkaar 1/352-353]

It appears that Abu Is-haaq is committing tadlees in this chain because of his using the vague form of reporting ” ‘an عن – from”. However, he is in fact not committing tadlees. Imam Al-Bayhaqi reports this narration, as mentioned above, with Abu Is-haaq clearly stating “And Haani ibn Haani and Hubayrah ibn Yareem narrated to me“;
قَالَ أَبُو إِسْحَاقَ وَحَدَّثَنِى هَانِئُ بْنُ هَانِئٍ وَهُبَيْرَةُ بْنُ يَرِيمَ عَنْ عَلِىِّ بْنِ أَبِى طَالِبٍ
This narration clearly shows that he did in fact hear this from Haani ibn Haani and Hubayrah ibn Yareem. It makes complete sense as well, that Abu Is-haaq heard this from Hubayrah ibn Yareem considering this was his wife’s uncle, as we alluded to earlier.
There is yet another Mursal chain report in the Tabaqaat of Ibn Sa’ad (4:22) that supports this conclusion:

قال أخبرنا الفضل بن دكين قال حدثنا حفص بن غياث عن جعفر بن محمد عن أبيه قالإن ابنة حمزةلتطوف بين الرجال إذ أخذ علي بيدها فألقاها إلى فاطمة في هودجها قال فاختصم فيها علي وجعفر وزيدبن حارثة حتى ارتفعت أصواتهم فأيقظوا النبي صلى الله عليه وسلم من نومه قالهلموا أقض بينكم فيهاوفي غيرها فقال عليابنة عمي وأنا أخرجتها ، وأنا أحق بهاوقال جعفرابنة عمي وخالتها عندي.وقال زيدابنة أخيفقال في كل واحد قولا رضيه ، فقضى بها لجعفر ، وقالالخالة والدةفقام جعفرفحجل حول النبي صلى الله عليه وسلم دار عليه فقال النبي عليه السلامما هذا.؟ قالشيء رأيتالحبشة يصنعونه بملوكهم

This chain is through Ja’far ibn Muhammad from his father Muhammad. It includes the ending, “The Nabi (SAWS) asked, ‘what is this?’ To which Ja’far (radhiya allahu ‘anhu) stated, ‘I saw the Abyssinians doing this for their Kings.’ This is a Mursal narration as stated by Shaykh Gibril Haddad and other than him. Imaam Diyaa’ Al-Maqdisi includes the previous narration in his Ahadith Mukhtaara (the chosen narrations) deeming it authentic.


IT IS THUS RADIANTLY CLEAR THAT THIS NARRATION IS SAHIH, AS STATED BY SHAYKH SHAAKIR, HAYTHAMI, ARNA’UT AND OTHERS.
It is necessary to point out to the reader that these men were dancing out of the joy of what the Prophet Muhammad (Peace Be Upon Him) said to them. This is proof that dancing can be done out of joy from the heart.


NOW LET ME PROVIDE MORE QUOTES FROM THE ULEMAS IN SUPPORT OF “RAQS”:
1: Imam Ibn Hajar Al-Haytami also mentions “it is permissible to stand and dance during gatherings of Dhikr and audition according to a group of great scholars, among them being Shaykh al- Islam Ibn Abdus Salam.”
(Fatawa al-hadithiyya, p. 298)

2: Imam Nawawi said: “Dancing is not unlawful, unless it is languid, like the movements of the effeminate. And it is permissible to speak and to sing poetry, unless it satirizes someone, is obscene, or alludes to a particular woman”
[Minhaj at talibin wa `umdat al-muttaqin. Cairo 1338/1920. Reprint. Cairo: Mustafa al-Babi al-Halabi edition, Pae No. 152]

3: Views of Ibn Kathir:

ابن زين الدين علي بن تبكتكين أحد الأجواد والسادات الكبراء والملوك الأمجاد، له آثار حسنة وقد عمر الجامع المظفري بسفح قاسيون، وكان قدهم بسياقه الماء إليه من ماء بذيرة فمنعه المعظم من ذلك، واعتل بأنه قد يمر على مقابر المسلمين بالسفوح، وكان يعمل المولد الشريف في ربيع الأول ويحتفل به احتفالا هائلا.
وكان مع ذلك شهما شجاعا فاتكا بطلا عاقلا عالما عادلا رحمه الله وأكرم مثواه.
وقد صنف الشيخ أبو الخطاب ابن دحية له مجلدا في المولد النبوي سماه: (التنوير في مولد البشير النذير)، فأجازه على ذلك بألف دينار، وقد طالت مدته في الملك في زمان الدولة الصلاحية، وقد كان محاصر عكا وإلى هذه السنة محمود السيرة والسريرة.
قال السبط: حكى بعض من حضر سماط المظفر في بعض الموالد كان يمد في ذلك السماط خمسة آلاف رأس مشوي، وعشرة آلاف دجاجة، ومائة ألف زبدية، وثلاثين ألف صحن حلوى، قال: وكان يحضر عنده في المولد أعيان العلماء والصوفية فيخلع عليهم ويطلق لهم ويعمل للصوفية سماعا من الظهر إلى الفجر، ويرقص بنفسه معهم، وكانت له دار ضيافة للوافدين من أي جهة على أي صفة، وكانت صدقاته في جميع القرب والطاعات على الحرمين وغيرهما، ويتفك من الفرنج في كل سنة خلقا من الأسارى.
حتى قيل إن جملة من استفكه من أيديهم ستون ألف أسير، قالت: زوجته ربيعة خاتون بنت أيوب - وكان قد زوجه إياها أخوها صلاح الدين، لما كان معه على عكا - قالت: كان قميصه لا يساوي خمسة دراهم فعاتبته بذلك فقال: لبسي ثوبا بخمسة وأتصدق بالباقي خير من أن البس ثوبا مثمنا وأدع الفقير المسكين، وكان يصرف على المولد في كل سنة ثلاثمائة ألف دينار، وعلى دار الضيافة في كل سنة مائة ألف دينار.
وعلى الحرمين والمياه بدرب الحجاز ثلاثين ألف دينار سوى صدقات السر، رحمه الله تعالى، وكانت وفاته بقلعة إربل، وأوصى أن يحمل إلى مكة فلم يتفق فدفن بمشهد علي.
,
Translation :I say that the Shah of Irbil. Malik Muzzafar Abu Sa’ed Kokabri Ibn Zayn-ud-din Ali bin Tabaktakin was a "GENEROUS, MIGHTY MASTER AND UPRIGHT RULER AND HIS WORKS WERE VERY GOOD" . He built Jamiya al Muzaffari near Qasiyun…الشريف في ربيع الاول ويحتفل به احتفا

"CELEBRATE MAWLID ASH-SHARIF WITH GREAT CELEBRATION (وكان يعمل المولد الشريف في ربيع الاول ويحتفل به احتفالا )" Moreover, he was "BENEVOLENT, BRAVE, WISE, A SCHOLAR AND JUST PERSON" – Rahimuhullah wal Ikraam – Sheikh Abul Khattab (rah) wrote a book on Mawlid an Nabwi for him and named it At-Tanwir fi Mawlid al Bashir al Nazeer, for which he gave him 1000 dinars. His rule stayed till the Rule of Salahiya and he captured Aka and he remained a man worthy of respect. Al-Sabt mentions that a person attending the gathering of Mawlid held by Muzzafar said: He used to fill the table with 5000 well cooked goats, 10,000 *****ens, 100-thousand bowls (of milk) and 30,000 trays of sweets.
The narrator explains that During Mawlid he used to hold great gathering of 
"SUFIS AND ULAMA AND HE USED TO GRANT THEM GIFTS": He used to arrange Sama for Sufis from Dhuhr till Asr IN WHICH HE HIMSELF DID RAQS. and he had built a Dar ul Ziafat for everyone who came no matter what position the person held, and he used to give sadaqat for Haramain Shareefain and also used to get many prisoners free from Farangis (i.e. white people probably Christians/Jews), It is said that he got 60,000 prisoners free from them.

His wife Rabiya bint Ayyub "WHO WAS MARRIED TO HIM BY HER BROTHER SALAH UD-DIN AYYUBI (Rahimuhullah), she says that his shirt was not even worth 5 Dirhams, so she complained to him about it at which he replied: For me to wear shirt of 5 Dirhams only and give remaining as Sadaqa is better than wearing expensive clothes or to leave the Fuqara and Masakeen. He used to spend Three hundred thousand Dinaar on Mawlid every year, Hundred thousand Dinar on welcoming guests, and 30,000 dinars to provide water for Pilgrims on travel – Rahimuhullah -

[Imam al Hafidh Ibn Kathir in Al Bidayah Wal Nihayah, Volume No.13, Page Nos. 174-175] 

Click here for Scan page from Al Bidayah : http://sunniforum.net/showthread.php?p=5391#2




__________________



NOW ON ISSUE OF WAJD, ECSTASY , SWOON

Imam Ahmad bin Hanbal(ra) said about the Sufis Ecstasy:

He said "I don't know people better than them." Someone said to him: "They listen to sama and they reach states of ecstasy." He said: " Do you prevent them from enjoying an hour with Allah?"

Reference :
[From Muhammad ibn Ahmad al-Saffarini al-Hanbali (died 1188) who related in his Ghidha' al-albab li-sharh manzumat al-adab from Ibrahim ibn `Abd Allah al-Qalanasi) (Cairo: Matba`at al-Najah, 1324/1906)]

Imam Ghazali [rah] Mentions Sahabas (ra), Salafs [rah] in extreme Ecstasy in Ihya uloom ud din , vol 2









Imam Ibn e Arabi on wajd/ecstasy 
In his book kitabb al wajd (luma 306.4-308.2) ,Janayd and sari al saqati( in d.253/867) explain that wajd can produce insensitivity towards pain to such an extent that a person can be struct by sword but not feel its effect

Imam Abu'l Husayn al-warraq (rah) 
Said that The way to God is difficult for one who does not come upon it with overwhelming enthusiasm (Wajd) and passionate desire.

Abu Hamza al khurasani [rah]
Said that HE heard his companions censuring another for being overcome by wajd ,and showing his inner state in a gathering where there were opponents of sama.Abu hamza (Rah) told him to stop his scolding for wajd obliterate distinctions, one should not be censured for being over come by wajd which is involuntary act, Then he quoted the verses from books of Moulana Rumi (rah) (d.283/896) 

Abu abd Allah al subayhi [rah]
said When wajd is genuine it should be upheld and defended, no one should be allowed to speak disparagingly of an altered state(hal)
He again said " The most complete form of fear is the one which takes characteristics of wajd, not from loss of some thing hoped for or desired

Imam Al kattani [rah]
said that the listener of sama ought to find more than just refershment, it causes wajd ,or being over whlemed, which destroys every settled and familiar nothing 

Abu Ali ad daqqaq [rah] said
that Abu l Husayn An Nuri (Rah) writes 
For 20 years I was between wajd and faqd,when I found my lord I lost my heart and when I found my heart I lost my lord 

Imam Siraaj [rah] in his kitab ul luma 
writes and gives authentic proofs of Prophet (Saw) and Sahabis (ra) going into wajd state several times, on hearing Quran

The great classical scholar Hadrat Ibn e Arabi [rah]
Says :Wajd is the states that come upon the heart,unexpectedly, and annihilate it from witnessing itself and those present ( kitab al wajd in luma p 309)

Sulami stated that Imam Junayd(rah)
 said,
"Nearness through ecstasy (wajd) is 'in-gathering' (jam'
); and absence through humanness is separation (tafriqah)."


Ibn E Taymiyyah [the wahabi sheikh ul islam] on Fana(wajd)

Book: Al Ubudiyyah: Being A True Slave Of Allah
Author: Ibn Taymiyah
Published: Ta-Ha Publishers
Adress: 1 Wynne Road, London,
PostCode: SW9 0BB
Country: UK


Page Number: 126
Chapter: Fana {"Oblivion"}

"An example of this is the concept of Fana {extinction of individual consciouness, recedence of the ego, obliteration of the self}. Fana is of three types:

1} The fana of the Prophets and Awliyah {Fana Fir'Rasool' & Fana Fil Awliyah} who have attained perfection.
2}The Fana of the Awliyah and the righteous peopl who are striving in the right direction even though they are not perfect.

Page Number: 127

3} The Fana of the hypocrites and heretics who liken Allah to His creation.

The first type of fana means the oblertation of the desire for anything except Allah so that a person does not love anyone or anything except Allah he does not worship anything except Him, he does not rely on anyone except Him and he deos not ask from anyone except Him. This is the sense which should be understood from the words of Seikh Abu Yazid {Al Bistami}: "I want to not to want anything except what He wants, what Pleases the beloved {Allah}." This is what is meant by the religios will of Allah. Perfection means that a man does not want love or like anything except what Allah wants loves and likes which is what He as caommanded and made wajib or mustahab. He only loves those whom Allah loves and such as the Angles, Prophets, and the righteous people. This is what is meant by their intrepration of the Ayah:


This is what is meant by their intrepration of the Ayah: "But only he will prosper who bring to Allah a sound heart." {26:89} They said its is sound and safe from evertthing ecept being a slave of Allah or everything ecvept wanting what Allah wants or everything except Loivng Allah. The meaning is the same and whether its is called fana or not it is the begining and end of Islam the foucus of entire religion."


The second type of fana is oblivion towards others which is attained by many of those who follow the path {triqah}, because their hearts are strongly attracted to remembering, wroshipping and loving Allah and distracted from noticing anyone or anything else. Nothing crosses their minds except thoughts of Allah; they are not even aware of anythng else, as was said in the interpretation of the ayah: "But there came to be a void in the heart of the mother of Musa. she was going almost to disclose his {case}, had We not strenthen her heart {with faith} ..." [28:10} They said: her heart was oblivious to ...
,
Page Number: 128

... everything except thoughts of Musa which is the kind of thing that often happens to thouse who are overwhelmed with some concern whether it be love or hope or fear - the heart is disracted from everything except that which is loved or hoped for or feared, so that it is unaware of anything else.
,

If this kind of fana overwhelms a person his focus on Allah becomes so intense that he is no longer aware of anything else
, not his own existance or the dhikr he is doing and everything diminishes in his senses, every created being the person, himself and everyone else and there remains only the Lord. What is meant is that everything is diminished in persons perception, so that he longer notices or remebers anything, and is quite oblivious to what is going on around him.


If this feeling becomes so strong that the person becomes confused and can no longer make proper distinctions he may think that he is his beloved
, as it was said that a man fell into the water and the one who loved him threw himself in after him. The former said: "I fell in by accident; what made you fall?" and the later replied: "I was so overwhelmed with love for you that i thought I was you."
,
The idea as caused many people to stumble so that they thought in the terms of phisical unity whereby there is no longer any difference between a person and the object of his love. This is incorrect, for the Creator can not be united with anything else without becoming somehting else altogather; ther essecne of the two things is lost when they unite, and they become a third of thing, neither this nor that as is the case when water and milk are mixed togather, or water or wine and so on. But what is loved and wanted by both becomes one, and what is hated and loathed by both becomes one, so they love ...


on page 129 ibn taymiyyah states about salafs

....... at the time of the Tabi'in
, among the worshippers of Al Basra, among whom were some who would swooon or even die when they heard the Quran, such as Abu Juhayr Al Darir and Zararah Ibn Awfa the Qadi of Al Basra.

Some of the Sufi Shaykhs experience this kind of oblivios and and intoxication where they are unable to make proper distinctions, 
and when they are in that state they may say words which when they come round they realise are wrong 
,. Such stories are reported about ...

... acetics such as Abu Yazid {al Bistami}, Abu'l Hasan Al Nuri and Abu Bakr Al Shibli and so on ...

on Page Number: 130

... unlike Abu Sulayman Al Darini, Maruf Al Khar'ki, and Al Fudayl Ibn Ayyad, let alone Al Junayd {Al Baghdadi} and so on, who remained of the sound mind throughou all their experiences and who never rell into states of oblivion or intoxication, etc. Those who have reached a level ofperfection have nothing in theri hearts except love of Allah and the desire to worship Him alone.[Book: Al Ubudiyyah: Being A True Slave Of Allahm Ta-Ha Publishers]

Ibn Taymiyyah again said again 

The second category consists of those sufis whose experience of fana and intoxication (sukr) weakened their sense of discrimination, and made them utter words that they later realized to be erroneous when they became sober

 Majmu Fatawa vol. 10, pp. 220-1



Proof of Wajd/ecstasy and falling down and shrieking on imagining the Prophet (صلّى الله عليه وآله وسلّم) of Glorious Sahabas (رضّى الله عنه) from Sahih hadiths

Hadrat Abu huraira (رضّى الله عنه) going into wajd/swoon 3 times
and falling down like other sahabas (Ra) as quoted by Imam Ghazali (Rah) in Ihya

أَنَّهُ دَخَلَ الْمَدِينَةَ فَإِذَا هُوَ بِرَجُلٍ قَدْ اجْتَمَعَ عَلَيْهِ النَّاسُ فَقَالَ مَنْ هَذَا فَقَالُوا أَبُو هُرَيْرَةَ فَدَنَوْتُ مِنْهُ حَتَّى قَعَدْتُ بَيْنَ يَدَيْهِ وَهُوَ يُحَدِّثُ النَّاسَ فَلَمَّا سَكَتَ وَخَلَا قُلْتُ لَهُ أَنْشُدُكَ بِحَقٍّ وَبِحَقٍّ لَمَا حَدَّثْتَنِي حَدِيثًا سَمِعْتَهُ مِنْ رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَقَلْتَهُ وَعَلِمْتَهُ فَقَالَ أَبُو هُرَيْرَةَ أَفْعَلُ لَأُحَدِّثَنَّكَ حَدِيثًا حَدَّثَنِيهِ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَقَلْتُهُ وَعَلِمْتُهُ ثُمَّ نَشَغَ أَبُو هُرَيْرَةَ نَشْغَةً فَمَكَثَ قَلِيلًا ثُمَّ أَفَاقَ فَقَالَ لَأُحَدِّثَنَّكَ حَدِيثًا حَدَّثَنِيهِ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فِي هَذَا الْبَيْتِ مَا مَعَنَا أَحَدٌ غَيْرِي وَغَيْرُهُ ثُمَّ نَشَغَ أَبُو هُرَيْرَةَ نَشْغَةً أُخْرَى ثُمَّ أَفَاقَ فَمَسَحَ وَجْهَهُ فَقَالَ لَأُحَدِّثَنَّكَ حَدِيثًا حَدَّثَنِيهِ

رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ وَأَنَا وَهُوَ فِي هَذَا الْبَيْتِ مَا مَعَنَا أَحَدٌ غَيْرِي وَغَيْرُهُ ثُمَّ نَشَغَ أَبُو هُرَيْرَةَ نَشْغَةً أُخْرَى ثُمَّ أَفَاقَ وَمَسَحَ وَجْهَهُ فَقَالَ أَفْعَلُ لَأُحَدِّثَنَّكَ حَدِيثًا حَدَّثَنِيهِ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ وَأَنَا مَعَهُ فِي هَذَا الْبَيْتِ مَا مَعَهُ أَحَدٌ غَيْرِي وَغَيْرُهُ ثُمَّ نَشَغَ أَبُو هُرَيْرَةَ نَشْغَةً شَدِيدَةً ثُمَّ مَالَ خَارًّا عَلَى وَجْهِهِ فَأَسْنَدْتُهُ عَلَيَّ طَوِيلًا ثُمَّ أَفَاقَ فَقَالَ حَدَّثَنِي

Translation: 
Shufayya Asbahi narrated: I entered Madinah and came upon a man around whom people had gathered. I asked, “Who is he?” They said, “Abu Hurayrah (R.A)“ So, I went near him till I sat down opposite him while he was narrating hadith to the people. When he paused and was alone I said to him, “I ask you by Truth, by Allah, narrate to me a hadith that you may have heard from Allah’s Messenger (SAW), understood it and remembered it.” He said, “ I will do that, narrate to you a hadith that Allah’s Messenger narrated to me and I understood it and I remember it” Then he shrieked and fell unconscious and revived after a while and repeated, “Surely, I will narrate to you a hadith that Allah’s Messenger (SAW) narrated to me in this house, there being no one else with us, only I and he.” Then, Abu Hurayrah shrieked loudly and fell unconscious. He recovered shortly, wired his face and said, “I will do it. Surely I will narrate to you a hadith that Allah’s Messenger narrated to me I and he were in this house, there being no one else with us, besides me and him.” Then he shrieked loudly and fell unconscious and, as he was falling done on his face, I supported him for a long time. Then he regained consciousness and said, “Allah’s Messenger (SAW) narrated....

Then he regained consciousness and said, “Allah’s Messenger (SAW) narrated to me that on the Day of Resurrection, Allah the Exalted, will come down to the worshippers to judge between them and all the ummahs will kneel down. .......

Reference:
(Sunan Al Tirmidhi 48:2389)


عَنْ أَبِي سَعِيْدٍ الْخُدْرِيِّ رضي الله عنه أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صلي الله عليه وآله وسلم قَالَ: أَكْثِرُوا ذِكْرَ اللَّهِ حَتَّى يَقُولُوا مَجْنُونٌ

Abu Saeed Khudri (
رضی اللہ عنہ) narrates that the Messenger of Allah (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) said,“Remember Allah (SWT) so much that people start saying, ‘He has gone mad.’”
.
References:
Ahmad ibn Hambal, al-Musnad (3:68#11671)
Ahmad ibn Hambal, al-Musnad (3:71#11692)
Ibn Hibban, as-Sahih (3:99#817)
Abu Yala, al-Musnad (2:521#1376)
Abd ibn Humayd, al-Musnad (1:289#925)
Hakim, al-Mustadrak (1:677#1839)
Bayhaqi, Shuab-ul-iman (1:397#526)
Daylami, al-Firdaws bima thur al-khitab (1:72#212)
Ibn Rajab, Jami-ul-ulum wal-hikam (1:444)
Mundhiri, at-Targhib wat-tarhib (2:256#2304)


Great Awliya of Allah: Hadrat Data Ghanj Baksh Also known as Hadrat Ali Hejveri (رحمة الله عليه) quoted several instances and supported wajd,wajud in his Kashf ul Mahjub


View scan pages in English:

From Kashf Al Mahjub: Page numbers are printed at the bottom








Great Awliya of Allah: Hadrat Data Ghanj Baksh Also known as Hadrat Ali Hejveri (رحمة الله عليه)quoted several instances and supported wajd,wajud in his Kashf ul Mahjub

View scan pages in English: I have this full book with me as well

From Kashf Al Mahjub: Page numbers are printed at the bottom





.


Note:In same book Hadrat Ali Hejveri (رحمة الله عليه) was against intentional movements done which are better known as ecstasy to show off in which people in wajd are intentionally copied for a show off by other people . This has been declaired Haram in pg 522 of same book. Where as Wajd and Wujud is supported just as Imam Ghazali (رحمة الله عليه) did in His Ihya and Imam Ahmed Raza khan (رحمة الله عليه) did.





PART 4: URDU ARTICLE


وجد و تواجد

میں نیواں میرا مُرشد اُچا میں اُچیاں دے سنگ لائی
صدقے جاواں انہاں اُچیاں توں جنہاں نیویاں نال نبھائی


وجد :
وجد ایک ایسا روحانی جزبہ ہے۔ جو اللہ کی طرف سے باطن انسانی پر وارد ہو جس کے نتیجہ میں خوشی یا غم کی کیفیت پیدا ہوتی ہے اس جزبہ کے وارد ہونے سے باطن کی ہیت بدل جاتی ہے اور اس کے اندر رجوع اِلَی الله کا شوق پیدا ہوتا ہے گویا وجد ایک قسم کی راحت ہے یہ اس شخص کو حاصل ہوتی ہے جس کی صفات نفس مغلوب ہوں اور اس کی نظریں اللہ تعالٰی کی طرف لگی ہوں۔
وجد بعض اہل ایمان میں سے ایسے لوگوں کو ہوتا ہے کہ جب وہ قرآن پاک کی تلاوت یا نعت سنتے ہیں یا اللہ کا ذکر کرتے ہیں تو خشیت الٰہی یا محبت الٰہی یا محبت رسول ﷺ کی وجہ سےیا اولیاء اللہ کی منقبت یا تعریف و توصیف سننے کی وجہ سے ایک خاص کیفیت طاری ہوتی ہے۔ خصوصاً جب اللہ کا ذکر کیا جاتا ہےتو ذاکرین پہ انوار و تجلیات کا ورود ہوتا ہے جس کی وجہ سے ان کے جسم مختلف حرکات کرنے لگتے ہیں ۔ کبھی وہ رونے لگتے ہیں کبھی بھاگنے لگتے ہیں کبھی بیہوش ہو جاتے ہیں اور کبھی ادھر کبھی اُدھر کبھی آگے کبھی پیچھے جھکتے اور گرتے ہیں اور کبھی ان کے جسم تڑپنے لگتے ۔ یہ تمام حرکات غیر اختیاری ہوتی ہیں اس وقت انسان کا اپنے جسم پہ کوئی قابو نہیں ہوتا ۔اس کی مثال ایسے ہے کہ جیسے انسان کو جب چھینک یا کھانسی وغیرہ آتی ہے تو وہ انہیں قابو نہیں کر پاتا کیونکہ یہ غیر اختیاری افعال ہیں ۔ ایسے ہی وجد کی کیفیت بھی غیر اختیاری ہوتی ہے ۔
کشف المحجوب میں حضرت داتا گنج بخش علی ہجویری رحمتہ اللہ علیہ فرماتے ہیں:
’’ وجد کی کیفیت بیان نہیں کی جا سکتی۔ کیونکہ یہ وہ غم ہے جو محبت میں ملتا ہے اس لیے بیان سے باہر ہے نیز وجد طالب اور مطلوب کے درمیان ایک راز ہے جسے بیان کرنا مطلوب کی غیبت کے برابر ہے وجد عارفوں کی صفت ہے۔‘‘

(کشف المحجوب)۔



تواجد :

حضرت داتا گنج بخش علی ہجویری
 رحمتہ اللہ علیہ فرماتے ہیں:
’’ تواجد وجد لانے میں ایک تکلف ہوتا ہے ۔ اور یہ انعامات و شواہد حق کو دل کے حضور پیش کرنا ہے اور محبوب کے وصال کا خیال اور انسانی آرزووں کا جوش میں آنا ہے۔

حضورﷺ نے فرمایا:
’’جو کسی قوم سے مشابہت پیدا کرتا ہے وہ اسی سے ہوتا ہے‘‘
حضورﷺ نے فرمایا:
’’ جب تم قرآن پڑھو تو روو، اگر رونا نہ آے تو تکلف سے روو‘‘
اور یہ حدیث تواجد کے مباح ہونے پر گواہ ہے۔ ‘‘


(کشف المحجوب)



شیخ شہاب الدین سہروردی رحمتہ اللہ علیہ فرماتے ہیں:
’’ذکر اور فکر سے وجد کو حاصل کرنا تواجد کہلاتا ہے۔ ‘‘

(عوارف المعارف)


علامہ عبدالغنی ناطبی قدس سرہ فرماتےہیں:
’’تواجد یہ ہے کہ ایک شخص کو حقیقتہ وجد حاصل نہ ہو لیکن وہ تکلف سے وجد کو اختیار کرتا ہے اور اسے ظاہر کرتا ہے ، اس میں شک نہیں کہ تواجد میں حقیقی وجد والوں سے مشابہت اختیار کرنا ہے اور یہ نہ صرف جائز ہے بلکہ شرعاً مطلوب ہے۔ 
رسول اکرمﷺ نے فرمایا:
’’جس نے کسی قوم کی مشابہت اختیار کی وہ ان میں سے ہے‘‘۔

(الحدیث النسدیہ ج۲ ص٥۲٥)



وجد کی اقسام :
وجد کی ویسے تو بہت سی اقسام ہیں جیسے رونا، رقص کرنا، بھاگنا، تڑپنا (جس کو دیکھ کر بعض لوگ کرنٹ سے تشبیہ دیتے ہیں) کئی بار تو ایسا بھی ہوتا ہے کہ آدمی وجد میں ہوتا ہے جبکہ دیکھنے والوں کو ایسا ہی لگتا ہے کہ وہ بلکل نارمل حالت میں ہے۔
اور کئی بار تو آدمی وجد کی حالت میں ایسی حرکتیں کرتا ہے دیکھنے والوں کو ایسا لگتا ہے کہ وہ کوئی ڈرامہ کر رہا ہے لیکن وہ ایسا جان بوجھ کر ہر گز نہیں کرتا بلکہ غلبہ انوار خداوندی اور غلبہ خشیتہ خداوندی کی وجہ سے یہ حرکات ہوتی ہیں۔

کسی بزرگ نے وجد کے بارے میں فرمایا جس کا مفہوم عرض کرتا ہوں کہ جب وجد کا اثر زبان پر ہوتا ہے تو بندا روتا ہے چیختا ہے اور منہ سے مختلف الفاظ ادا کرتا ہے اور جب وجد کا اثر ہاتھوں پر ہوتا ہے تو وہ کپڑے پھاڑتا ہے منہ پر تماچے لگاتا ہے کبھی سینے پر مارتا ہے اور جب وجد کا اثر پاوں پر ہوتا ہے تو رقص کرتا ہے (کبھی تو بھاگتا بھی ہے)۔

وجد کی چند اقسام یہاں بیان کی جاتی ہیں:
۱) کل بدن کی حرکت اور اضطراب
۲) بعض بدن کی حرکت مثلاً لطائف کی حرکت
۳) رقص کرنا
٤) منہ سے کچھ الفاظ کا جاری ہو جانا مثلاً ھو، ھو، ھا، ھا، آہ، اف، اللہ، اللہ وغیرہ ﴿ اور یا رسول اللہ ﷺ بھی منہ سے جاری ہونا واللہ میں نے خود ایسا دیکھا ہے ﴾
۵) بکا و رونا بلا صوت بہنا
٦) کپڑے پھاڑنا دوڑنا اور چیخنا وغیرہ
۷) اعضاء کا ٹوٹ جانا موت کا خطرہ بلکہ واقع ہو جانا جیسا کہ حضرت داود علیہ السلام کہ صحابہ کرام رضوان اللہ علیھم اجمعین میں سینکڑوں کی تعداد وجد کی وجہ سے فوت ہو جاتے تھے۔ اورحضور غوث اعظم رضی اللہ تعالٰی عنہ کی مجالس میں بھی ۲ سے لے کر ٧۰ جنازے تک اٹھتے تھے۔
۸) نعرہ لگانا اور کبھی نارہ لگا کر بےہوش ہو جانا
۹) نماز میں وجد بے اختیاری ، بےہوش ہونا وغیرہ بعض اوقات خارج نماز وجد طاری ہونا۔



وجد پر اعتراضات :
وجد کی ویسے تو اوپر مختلف اقسام بیان کی گئی ہیں لیکن سب سے زیارہ منکرین صوفیاء کے رقص پہ اعتراضات کرتے ہیں اور اسی سلسلہ میں کچھ فقہاء کی عبارات پیش کرتے ہیں جن میں رقص کو ناجائز کہا گیا ہے ۔ لیکن یہاں یہ وضاحت کرنی ضروری ہے کہ فقہاء اور علماء نے صوفیاء کے وجد کو نہیں بلکہ ایسے رقص کو ناجائز کہا ہے جو کسی دنیاوی غرض کے لیے ہو یا پھر دکھلاوے کے لیے ہو یا پھر ایسا رقص ہو جس میں زنانہ قسم کی حرکات ہوں یا پھر کسی غیر مرد یا عورت کے ساتھ کیا جائے یا پھر ایسا رقص ہو جو گانے بجانے کے ساتھ کیا جائے جیسا کہ فلموں میں آج کل ہوتا ہے یا پھر ایسا رقص ہو جو دباروں پہ ملنگ (اپنے آپ سے تنگ) کرتے ہیں جس میں گھنگھرو وغیرہ ڈال کے نشہ وغیرہ کر کے اور ڈھولوں پے کرتے ہیں اور ساتھ کچھ عورتیں بھی کھلے بالوں کے ساتھ ناچ رہی ہوتی ہیں یاد رکھیے گا یہ وجد نہیں ہوتا ۔ اور اس قسم کے رقص کو ہی علماء نے ناجائز کہا ہے ۔

یہاں واضح کر دوں کہ اس قسم کے رقص کو تو ہم بھی ناجائز کہتے ہیں اور ہمارے علماء کے اس پر فتوے موجود ہیں انشاءاللہ عزوجل آگے وہ بھی پیش کیے جائیں گے ۔ 
لیکن بعض منکرین ایسے رقص کو صوفیاء کی طرف منسوب کرتے ہیں جبکہ یہ بلکل غلط ہے نہ تو صوفیاء اسطرح کا رقص کرتے ہیں اور نہ ہی جائز سمجھتے ہیں بلکہ صوفیاء جو رقص کرتے ہیں وہ غلبہ عشق کی وجہ سے ہوتا ہے جو بے اختیار ہوتا ہے نہ کہ دکھلاوے کہ لیے اور اس قسم کے وجد و رقص کو فقہاء نے جائز کہا ہے ۔

میں نے کچھ دن پہلے ایک آرٹیکل دیکھا جو غیر مقلدین نے لکھا تھا جس میں انتہائی دھوکہ دہی سے کام لیا گیا اس میں حنفی فقہاء اور علماء کی کتابوں سے چند عبارات جو کہ جعلی صوفیاء (جن کو ملنگ بھی کہتے ہیں جو نشہ وغیرہ کرتے ہیں) کے بارے میں اور دنیاوی رقص جس میں سیٹیاں مارنا تالیاں بجانا وغیرہ جیسے افعال کیے جاتے ہیں کو ناجائز کہا گیا تھا ان کو صوفیاء پہ زبردستی چسپایا گیا جبکہ انہی فقہاء اور علماء نے صوفیاء کے وجد کو دلائل سے ثابت کیا ہے ۔ 
اور ظالم یہ نہ جانتے تھے کہ جس چیز کے ناجائز ہونے پہ وہ دلائل پیش کر رہے ہیں وہ صوفیاء میں نہیں بلکہ خود ان میں موجود ہیں جن کہ آگے ثبوت بھی دیے جائیں گے انشاءاللہ عزوجل ۔



Quran aur Wajd

سورة الزمر٣٩:٢٣


ترجمہ:
اللہ نے اتاری سب سے اچھی کتاب کہ اوّل سے آخر تک ایک سی ہے دوہرے بیان والی اس سے بال کھڑے ہوتے ہیں ان کے بدن پر جو اپنے رب سے ڈرتے ہیں پھر ان کی کھالیں اور دل نرم پڑتے ہیں یادِ خدا کی طرف رغبت میں یہ اللہ کی ہدایت ہے راہ دکھائے اس سے جسے چاہے اور جسے اللہ گمراہ کرے اسے کوئی راہ دکھانے والا نہیں.


تفسیر :
١ قاضی ثناء اللہ پانی پتی رحمتہ اللہ علیہ تفسیر مظہری میں فرماتے ہیں یعنی اللہ کی رحمت اور عموم مغفرت کا جب وہ ذکر کرتے ہیں تو اس ذکر کی وجہ سے ان کے دلوں میں سکون اور اطمینان پیدا ہو جاتا ہے ذکر اللہ کے ساتھ رحمت کا ذکر نہیں کیا کیونکہ اصل تو رحمت ہی ہے اللہ کی رحمت غضب پر غالب ہے اِلٰی ذکر اللہ میں بمعنی لام ہے یعنی اللہ تعالٰی کے ذکر کی وجہ سے لیکن ذکر کے اندر چونکہ سکون و اطمینان کا مفہوم داخل ہے اس لیے بجائے لام کے اِلٰی کہا گیا ۔ مطلب یہ ہے کہ جب قرآن میں آیاتِ وعید کا ذکر آتا ہے۔ تو مومنوں کے رونگٹے کھڑے ہو جاتے ہیں جلد بدن سکڑ جاتی ہے اس میں انقباض پیدا ہو جاتا ہے اور جب آیات کا ذکر آتا ہے تو کھالوں کا انقباض جاتا رہتا ہے ۔ کھا لیں نرم ہو جاتی ہیں اور دلوں میں سکون پیدا ہو جاتا ہے۔ 
مزید قاضی صاحب رحمتہ اللہ علیہ نے اسی آیت کی تفسیر میں تفصیلاً وجد و حال پہ بحث کر کے اس کو ثابت کیا ہے ۔ ضرورت پڑنے پر پوری عبارت پیش کی جا سکتی ہے اور سکین پیج بھی لگایا جا سکتا ہے ۔

(تفسیر مظہری سورة الزمر آیت ۲۳)

٢﴾ اسی طرح مفسر جلیل القدر فقیہ اعظم علامہ ابو البرکات عبداللہ نفسی حنفی رحمتہ اللہ علیہ نے اپنی تفسیر مدارک میں سورۃ زمر کی آیت ٢٣ کی تفسیر میں بدن کا لرزنا وجد اور حال کے اثبات اور شرافت کے بارے میں اس طرح لکھا ہے :

قرآن کریم کی آیت کی تلاوت سن کر ان لوگوں کی کھال حرکت میں آئی ہے جو اپنے رب سے ڈرتے ہیں کہ کھال کا اکڑ جانا اور پھر لرزنا نیز معنی یہ ہوئے کہ اللہ تعالٰی سے ڈرنے والے جب قرآن سنتے ہیں تو اس کے سننے سے ان کی کھال لرزنے لگتی ہے اور اس میں مضطراب اور بے چینی پیدا ہوتی ہے۔ حدیث شریف میں الفاظ ہیں کہ: ’’ جب مؤمن کی کھال اللہ تعالٰی کے خوف سے حرکت میں آتی ہے تو اس کے گناہ اس طرح جھڑتے ہیں جس طرح خشک درخت سے پتے جھڑتے ہیں۔ ‘‘
(تفسیرمدارک ج ٤ ص ٣٦ سورة الزمر آیت ۲۳)

تفسیر الجلالین میں تقشعر کا معنٰی ترتعد ﴿ کانپنا / لرزنا ﴾ تحریر کیا ہے ۔
تفسیر مدارک میں تقشعر کا معنٰی تتحرک اور تضطرب تحریر کیا ہے ۔

سورة الأعراف ٧:١٥٥

ترجمہ:
اور موسٰی نے اپنی قوم سے ستر (۷۰) مرد ہمارے وعدہ کے لئے چُنے پھر جب انہیں زلزلہ نے لیا موسٰی نے عرض کی اے رب میرے تو چاہتا تو پہلے ہی انہیں اور مجھے ہلاک کر دیتا کیا تو ہمیں اس کام پر ہلاک فرمائے گا جو ہمارے بے عقلوں نے کیا وہ نہیں مگر تیرا آزمانا تو اس سے بہکائے جسے چاہے اور راہ دکھائے جسے چاہے تو ہمارا مولٰی ہے تو ہمیں بخش دے اور ہم پر مہر کر اور تو سب سے بہتر بخشنے والا ہے.


تفسیر:
اس آیت کی تفسیر میں حضرت علامہ سید محمود آلوسی بغدادی رحمتہ اللہ علیہ فرماتےہیں:
حضرت موسٰی علیہ السلام نے اپنی قوم کے اشراف سے ستر(۷۰) ایسے افراد کا انتخاب کیا جو صاحبان استعداد اور سلوک تھے۔جب ان پر تجلیات کا ظہور ہوا تو ان کے جلد اور بدن حرکت کرنے لگے اور ان کو زلزلے نے آ لیا۔ یعنی وہ کانپنے لگے اور کانپنا جو بدن پر تجلی صفاتیہ اور انوار و خوارق کے ظہور کے سبب سے لگتا ہے جو بدن پر بال کھڑے ہونے اور بدن کی حرکت سے عبارت ہے ، ایسی حالت اکثر سالکین پر ظاہر ہوتی ہے جو قرآن کریم کی تلاوت کرنے سننے یا اشعار سننے سے آتی ہے قریب ہے کہ اس سے ان کے اعضاء ایک دوسرے سے جدا ہو جائیں ۔( وہ اشعار جن میں رسول اکرم ﷺ کی صفت کی گئی ہو یا اولیاء کرام کی مدح پر مشتمل ہوں ) اور ہم نے یہ مشاہدہ کیا حضرت خالد رحمتہ اللہ علیہ کے مریدوں میں جو طریقہ نقشبندیہ میں تھے اور نماز کے دوران یہ حالت عارض ہونے کی وجہ سے اکثر وہ نماز میں چیختے تھے۔ اسی وجہ بعض سالکین نماز کا اعادہ کرتے تھے اور بعض نہیں کرتے ان لوگوں پر بہت انکار کیا جاتا ہے اور میں نے بعض منکرین سے سنا ہے وہ کہتے ہیں اگر یہ حالت عقل و شعور کی موجودگی کے با وجود عارض ہو جائے تو یہ بےادبی ہے اور اس سے نماز ٹوٹ جاتی ہے اور اگر یہ حالت عقل و شعور کی عدم موجودگی میں آ جائے تو وضو ٹوٹ جاتا ہے اور ہم دیکھتے ہیں کہ وہ وضو نہیں کرتے۔ میں ان کو جواب دیتا ہوں جن کا خیال ہے کہ وجد اور اس حالت سے نماز اور وضو دونو ٹوٹ جاتے ہیں کہ یہ حالت غیر اختیاری ہے عقل و شعور کے ساتھ اس کی مثال کھانسی یا چھینک جیسی ہے اس لیے اس سے نہ تو نماز باطل ہوتی ہے اور نہ وضو ٹوٹتا ہے۔ اور شوافع نے کہا ہے کہ اگر نمازی پر ہنسنا غالب آجائے تو اس کی نماز فاسد نہیں ہے اور نمازی اس صورت میں معذور سمجھا جائیگا ۔ بعید نہیں کہ تجلیات غیر اختیاریہ کے آثار کو بھی اس کے ساتھ ملحق کیا جائے اور عدم فساد صلٰوۃ پر حکم کیا جائے اور کسی چیز کے غیر اختیاری ہونے سے اس چیز کا غیر شعوری ہونا لازم نہیں کیونکہ مرتعش کی حرکت غیر اختیاری ہے اور غیر شعوری نہیں ہے بلکہ اس کے ساتھ عقل اور شعور موجود ہوتے ہیں اور یہ تو ظاہر باہر کا معاملہ ہے ۔ پس اس سے انکار کرنے کی کوئی گنجائش نہیں۔


(تفسیر روح المعانی سورة الأعراف آیت١٥٥)





سورة الحديد ٥٧:١٦


ترجمہ:
کیا ایمان والوں کو ابھی وہ وقت نہ آیا کہ ان کے دل جھک جائیں اللہ کی یاد اور اس حق کے لیے جو اترا اور ان جیسے نہ ہوں جن کو پہلے کتاب دی گئی پھر ان پر مدت دراز ہوئی تو ان کے دل سخت ہوگئے اور ان میں بہت فاسق ہیں۔ 


تفسیر :
اس آیت مبارکہ کی تفسیر میں امام فخر الدین رازی رحمتہ اللہ علیہ لکھتے ہیں یعنی حقیقت میں مومن مومن نہیں ہوتا مگر خشوع قلب کے ساتھ اور رونا اور بے اختیار گرنا ﴿یعنی وجد و حال﴾ باعث زیادتی خشوع قلب ہے۔
(تفسیر کبیر ص ۹۳ جلد ۸) 







سورة الحشر ٥٩:٢۱


ترجمہ:
اگر ہم یہ قرآن کسی پہاڑ پر اتارتے تو ضرور تو اسے دیکھتا جھکا ہوا پاش پاش ہوتا اللہ کے خوف سے اور یہ مثالیں لوگوں کے لئے ہم بیان فرماتے ہیں کہ وہ سوچیں۔ 


امام غزالی رحمتہ اللہ علیہ فرماتے ہیں :
قلب کی طما نیت ،شدت خوف سے جسم کی لرزش ، قلب کی رقت ، نرمی اور خشوع وجد ہی کے مختلف مظاہر ہیں، اگرچہ یہ مظاہر حالات کے قبیل سے ہیں ، مکاشفات کے قبیل سے نہیں ، لیکن کبھی کبھی یہ حالات بھی مکاشفات کا سبب بن جاتے ہیں۔
(احیاء علوم الدین، کتاب آداب السماع و الوجد ص٤٦٦ )

یہ آیت کریمہ اثبات وجد پر صریح دلیل ہے جب قرآن کریم کے نزول سے پہاڑ ٹکڑے ٹکڑ ے ہوتا ہے تو چاہئے کہ انسان کے بدن اور دل پر بھی اس کے آثار طاری ہوں جیسے رونا ، بے ہوش ہونا ، لرزہ طاری ہونا یا دیگر احوال جو وجد کی حالت میں پیش آتے ہیں ۔






سورة الأعراف ٧:١٤٣


ترجمہ:
اور جب موسٰی ہمارے وعدہ پر حاضر ہوا اور اس سے اس کے رب نے کلام فرمایا عرض کی اے رب میرے مجھے اپنا دیدار دکھا کہ میں تجھے دیکھوں فرمایا تو مجھے ہرگز نہ دیکھ سکے گا ہاں اس پہاڑ کی طرف دیکھ یہ اگر اپنی جگہ پر ٹھہرا رہا تو عنقریب تو مجھے دیکھ لے گا پھر جب اس کے رب نے پہاڑ پر اپنا نور چمکایا اسے پاش پاش کر دیا اور موسٰی گرا بے ہوش پھر جب ہوش ہوا بولا پاکی ہے تجھے میں تیری طرف رجوع لایا اور میں سب سے پہلا مسلمان ہوں۔

تفسیر مظہری میں اس آیت کی تفسیر دیکھیں 







سورة يوسف ١٢:٣١


ترجمہ:
تو جب زلیخا نے ان کا چرچا سنا تو ان عورتوں کو بلا بھیجا اور ان کے لیے مسندیں تیار کیں اور ان میں ہر ایک کو ایک چھری دی اور یوسف سے کہا ان پر نکل آؤ جب عورتوں نے یوسف کو دیکھا اس کی بڑائی بولنے لگیں اور اپنے ہاتھ کاٹ لیے اور بولیں اللہ کو پاکی ہے یہ تو جنس بشر سے نہیں یہ تو نہیں مگر کوئی معزز فرشتہ

دیکھیں تفسیر روح البیان

احادیث مبارکہ، صحابہ کرام، تابعین تبع تابعین اور اولیائے کرام سے

حدیث ۱:
حدّثنا عبد الله حدثني أبي، ثنا عبد الصمد قال: ثنا حماد ، عن ثابت ، عن أنس قال: كانت الحبشة يزفنون بين يدي رسول الله صلى الله عليه وسلّم ويرقصون ويقولون: محمد عبد صالح ، فقال رسول الله صلى الله عليه وسلّم: ما يقولون؟ قالوا: يقولون: محمد عبد صالح

ترجمہ :
’’حضرت انس رضی اللہ تعالٰی عنہ سے روایت ہے کہ حبشی حضور ﷺ کے سامنے موجود تھے اوررقص کرتے تھے (یرقصون) اور کہتے تھےمحمدﷺ عبد صالح حضور نبی اکرم ﷺ نے پوچھا یہ کیا کہتے ہیں انہوں نے کہا محمد ﷺ عبد صالح‘‘

(مسند احمد ابن حنبل جلد۳ ص۱۵۲)
اس حدیث کے تمام راوی صحیح بخاری اور مسلم والے ہیں
شیخ شعیب الارنؤوط نے اس حدیث کے بعد کہا :
إسناده صحيح على شرط مسلم

امام ابن حجر الھیثمی رحمتہ اللہ علیہ اس حدیث کے بارے میں فرماتے ہیں : ﴿رف ترجمہ﴾
کبہ بجانا ممنوع ہے ۔۔۔۔۔۔ لیکن رقص کرنا نہیں ، نہ ہی ممنوع ہے اور نہ ہی ناپسندیدہ ، کیونکہ یہ صرف حرکات ہیں جو جھک کر اور کھڑے ہو کر کی گیئں، اور مزید کیونکہ آپ ﷺ نے عید کے دن حبشیوں کا مسجد نبوی ﷺ میں ایسا کرنے پر اتفاق کیا (یعنی ایسا کرنے دیا) جیسا کہ بخاری اور مسلم نے روایت کیا ۔
بولڈ میں جو لکھا ہوا ہے وہ امام نووی رحمتہ اللہ علیہ کی المنھاج سے ہے جبکہ باقی امام ابن حجر کی شرح ہے ۔

﴿تحفہ المحتجا فی شرح المنھاج ﴾



امام احمد ابن حنبل رحمتہ اللہ علیہ جو کہ خود سلف ہیں کے علاوہ مزید جن آئمہ حدیث اور آئمہ لغت نے اسے رقص کہا ہے :

۱ امام طبرانی رحمتہ اللہ علیہ نے رقص کہا ، جلد ٩ ص۱۲۱ حدیث ۳
٢ امام نسائی رحمتہ اللہ علیہ نے سنن الکبری میں ج ٥ ص ۳۰٥
٣ امام سیوطی رحمتہ اللہ علیہ، شرح بخاری ص۱۲۳
٤ امام جوہری نے اپنی کتاب الغت ص٤٦
٥ امام ابن منظور ، لِسان العرب جلد ۱۳ ص١٩٨٧،١٩٧
٦ امام نووی رحمتہ اللہ علیہ نے ، شرح صحيح مسلم ص ٣٤٧
٧ قاضی عیاض رحمتہ اللہ علیہ، شرح صحيح مسلم ص ٤٢٩
٨ علامہ المرتضیٰ الزبیدی رحمتہ اللہ علیہ ، تاج العروس جلد ۱۸ ص ۲٢١،۲۰٦



حدیث ۲:
حَدَّثَنَا ‏ ‏أَسْوَدُ يَعْنِي ابْنَ عَامِرٍ ‏ ‏أَنْبَأَنَا ‏ ‏إِسْرَائِيلُ ‏ ‏عَنْ ‏ ‏أَبِي إِسْحَاقَ ‏ ‏عَنْ ‏ ‏هَانِئِ بْنِ هَانِئٍ ‏ ‏عَنْ ‏ ‏عَلِيٍّ ‏ ‏رَضِيَ اللَّهُ عَنْهُ ‏ ‏قَالَ ‏أَتَيْتُ النَّبِيَّ ‏ ‏صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ‏ ‏وَجَعْفَرٌ ‏ ‏وَزَيْدٌ ‏ ‏قَالَ ‏ ‏فَقَالَ ‏ ‏لِزَيْدٍ ‏ ‏أَنْتَ ‏ ‏ مَوْلَايَ ‏ ‏ فَحَجَلَ ‏ ‏قَالَ وَقَالَ ‏ ‏لِجَعْفَرٍ ‏ ‏أَنْتَ أَشْبَهْتَ خَلْقِي وَخُلُقِي قَالَ ‏ ‏ فَحَجَلَ ‏ ‏وَرَاءَ ‏ ‏زَيْدٍ ‏ ‏قَالَ وَقَالَ لِي أَنْتَ مِنِّي وَأَنَا مِنْكَ قَالَ ‏ ‏ فَحَجَلْتُ ‏ ‏وَرَاءَ ‏ ‏جَعْفَرٍ

ترجمہ :
’’حضرت علی رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں کہ میں حضرت جعفر رضی اللہ عنہ اور حضرت زید بن حارثہ رضی اللہ عنہ نبی کریم ﷺ کی خدمت میں حاضر ہوئے ، نبی کریم ﷺ نے حضرت زید سے فرمایا:زید! آپ ہمارے آزاد کردہ غلام ہیں ( أَنْتَ ‏ ‏ مَوْلَايَ) تو اس پر انہوں نے نبی کریم ﷺ کے گردایک ٹانگ پے چکر لگانے شروع کر دیے (فحجل) ،پھر حضور نبی اکرم ﷺ نے حضرت جعفر سے فرمایا : جعفر! آپ صورت اور سیرت میں میرے مشابہ ہیں اس پر حضرت جعفر نے بھی حضرت زید کے پیچھے ایک ٹانگ پے چکر لگانے شروع کر دیے (فحجل) ،پھر حضور نبی اکرم ﷺ نے حضرت علی سے فرمایا : علی! آپ مجھ سے ہیں اور میں آپ سے ہوں اس پر انہوں نے بھی حضرت جعفر کے پیچھے ایک ٹانگ پے چکر لگانے شروع کر دیے(فحجلت) ‘‘

(مسند احمد ابن حنبل جلد۱ ص۵۳۷ ، حدیث۸۵۷)

محدث شیخ احمد شاکر نے اپنی مسند احمد کی تحقیق میں کہا ’إسناده صحيح (مسند احمد جلد ١ ص٥٣٧ حدیث ٨٥٧)
امام البزار رحمتہ اللہ علیہ نے اپنی مسند میں ﴿ البزار ، المسند جلد ٢ ص ٣١٦ حدیث ٧٤٤ ﴾
امام الهیثمی رحمتہ اللہ علیہ فرماتے ہیں کہ امام البزار رحمتہ اللہ علیہ نے اپنی مسند میں اس کو صحیح سند کے ساتھ روایت کیا ہے ، (مجمع الزوائد جلد٥ ص۱۵۷)
امام بیہقی رحمتہ اللہ علیہ نے اپنی سنن الکبری میں روایت کیا ہے (جلد ١٠ ص ٢٢٦ حدیث ٢٠٨١٦)
امام نسائی رحمتہ اللہ علیہ ﴿ نسائی ، السنن الکبریٰ جلد ٥ ص ۱٦٨،۱٢٧ ۔ ٨٥٧٨، ٨٤٥٦ ﴾
امام ابن حبان رحمتہ اللہ علیہ ﴿ ابن حبان الصحیح جلد ١١ ص ٢٢٩ حدیث ٤٨٧٣ ﴾
امام ابن سعد رحمتہ اللہ علیہ نے اپنی طبقات میں (جلد ٤ ص ٢٢)


امام الحافظ البیہقی رحمتہ اللہ علیہ اس حدیث کی وضاحت کرتے ہوئے فرماتے ہیں:
وفي هَذَا إنْ صَحَّ دلالةٌ على جوازِ الحَجْلِ، وهو أَنْ يَرْفَعَ رِجْلاً ويَقْفِزَ على الأُخْرَى مِنَ الفَرَحِ، فالرقصُ الَّذِي يكونُ عَلَى مِثَالِهِ يكونُ مِثْلَهُ في الجوازِ. والله أعلمُ

رف ترجمہ:

اس حدیث میں صحیح ثبوت اور جواز ہے حجل (رقص) کا جس میں خوشی کی حالت میں اوپر اٹھنا اور کودنا شامل ہے اور اسی طرح رقص کرنا جو اس جیسا ہو کا بھی جواز ہے ۔ واللہ اعلم

(سنن البیہقی الکبری ١٥/٣٣٣)



نوٹ:
اس حدیث کے ایک راوی هانی بن هانی جن پر سلفی جرح ثابت کرتے ہیں ، یہ رہی اس پر مفسر تعدیل:


محدثین نے کہا :
هانئ بن هانئ عن على رضى الله عنه. قال ابن المدينى: مجهول. وقال النسائي: ليس به بأس. وذكره ابن حبان في الثقات
ترجمہ:
ھانی بن ھانی نے حضرت علی رضی اللہ تعالٰی عنہ سے روایت کیا، ابن المدينى نے کہا: وہ مجھول ہے ، امام نسائی رحمتہ اللہ علیہ نے کہا :اس میں کوئی نقص نہیں، اور ابن حبان نے اس کا ذکر اپنی ثقات میں کیا ۔
(امام ذہبی، میزان الاعتدال ٧/٧١)

نوٹ:
یاد رکھیے کچھ محدثین کی نظر میں مجھول ہونے کا یہ مطلب نہیں کہ راوی کمزور ہے ، کیونکہ تمام محدثین تمام رجال کے بارے میں نہیں جانتے تھے ، اس لیے اگر دوسرے محدثین نے تعدیل کی ہو اور کچھ نے مجھول کہا ہو تو تعدیل کو ترجیح دی جائے گی ۔۔


۱) امام ترمزی رحمتہ اللہ علیہ:
امام ترمزی نے ھانی بن ھانی سے کئی احادیث کو ’حسن صحیح‘ قرار دیا ہے
(سنن ترمزی جلد ٥ حدیث ۳۷۹۸)


۲) امام ابن ماجہ رحمتہ اللہ علیہ:
امام ابن ماجہ نے اس سے رویت کیا اور سکوت کیا
(سنن ابن ماجہ، مقدمہ، حدیث ۱٤۳)


امام ابن حبان رحمتہ اللہ علیہ:
امام ابن حبان نے اپنی کتاب الثقات میں ھانی بن ھانی کا ذکر کیا (٥/٥٠٨)


۳) امام الاجلی رحمتہ اللہ علیہ:
امام الاجلی نے کہا :
هانىء ابن هانىء، كوفي، تابعي ثقة
(ثقات الاجلی جلد۱ ص٤٥٤)


٤) امام الھیثمی رحمتہ اللہ علیہ:
امام الھیثمی نے کہا :
ورجال أحمد والبزار رجال الصحيح غير هانىء بن هانىء وهو ثقة
ترجمہ:
احمد اور البزار کے رجال صحیح والے ہیں سوائے ھانی بن ھانی کے جو ثقہ ہے
(مجمع الزوائد ٨/١٠٢)۔


٥) امام حاکم رحمتہ اللہ علیہ :
امام حاکم رحمتہ اللہ علیہ نے بھی ھانی بن ھانی سے احادیث کو صحیح قرار دیا ہے
﴿مستدرک الحاکم ۱۷۹ /۳)


ناصر الدین البانی :
وھابیہ/سلفیوں کےشیخ نے بھی ھانی بن ھانی سے احادیث کو صحیح قرار دیا ہے
(صحیح سنن ابن ماجہ ، البانی ۱/١١٩)



جیسا کہ آپ دیکھ سکتے ہیں کہ وھابیہ / سلفیوں کے معروف محدث شیخ احمد شاکر نے اپنی مسند احمد کی تحقیق میں اس حدیث کو صحیحقرار دیا ہے اور البانی نے ھانی بن ھانی سے احادیث کو صحیح قرار دیا ہے تو اس کے بعد اب وھابیہ کے لیے کوئی گنجائیش نہیں رہ جاتی اعتراض کرنے کی ۔ الحمدللہ یہ دو ﴿٢﴾ احادیث صوفیاء کے وجد و رقص کے لئے قوی دلیل ہیں ۔


حدیث ٣ :
اسی طرح امام بخاری رحمتہ اللہ علیہ نے عذاب قبر کے باب میں اسماء بنت ابی بکر رضی اللہ عنہا کی راوایت نقل کی :
’’ قالت قام رسول اللہ ﷺ خطیبا فذکر فتنه القبر تفتن فیھا المرء فلما ذکر ذالک ضج المسلمون ضج
ة ای صاحوا صیحة ‘‘
ترجمہ:
حضرت اسماء رضی اللہ عنہا فرماتی ہیں کہ رسول اللہ ﷺ خطبہ دینے کے لیے کھڑے ہوئے تو فتنہ قبر کا ذکر کیا جو بندے سے امتحان ہوتا ہے۔ جب قبر کی حالت کا ذکر ہوتا ہے صحابہ کرام رضوان اللہ تعالٰی علیہم اجمعین نے چیخیں مارنا شروع کیں۔


اور امام نسائی رحمتہ اللہ علیہ ان الفاظ کا اضافہ کیا !
’’ حتی حالت بینی وبین ان افھم کلام رسول اللہ ﷺ فلما سکنت ضجتھم قلت لرجل قریب منی ای بارک اللہ فیک ماذا قال رسول اللہ ﷺ فی آخر قوله؟ قال : قد اوحی الی انکم تفتنون فی القبور قریبا من فتن
ة الدجال‘‘
ترجمہ:
یہاں تک کہ صحابہ کرام رضوان اللہ تعالٰی علیہم اجمعین کا وہ شور میرے اور حضورﷺ کا کلام مبارک سمجھنے کے درمیان حائل ہوا جب حضورﷺکا خطبہ مبارک ختم ہوا تو میں نے ایک صحابی سے پوچھا کہ آخر میں نبی کریمﷺ نے کیا فرمایا ؟ تو انہوں نے کہا حضور اکرم ﷺ نے فرمایا: کہ مجھ پر وحی نازل ہوئی ہے کہ فتنہ دجال کے وقت تم قبر کے فتنے میں ڈالے جاؤ گے۔


١ بخاری ، کتاب الجنائز ج ١ ص ۱۳۸
۲ سنن نسائی ، کتاب الجنائز 
ج ١ ص٢٢٤ ،کتاب التعوذ من عذاب القبر٣ مشکوٰۃ شریف ، باب اثبات عذاب القبر ج ١ ص ٢٦
اب غور کرنا چاہئے کہ نبی اکرم ﷺ کا وعظ و خطبے کے دوران صحابہ کرام رضوان اللہ تعالٰی علیہم اجمعین کا خوفِ الٰہی کے سبب چیخیں مارنا خلافِ ادب تصور کیا جائے گا یا نہیں حضور اکرم ﷺ کی محفل اقدس میں اور حضور ﷺ کی آواز مبارکہ سے صحابہ کرام رضوان اللہ تعالٰی اجمعین کی آوازیں خوفِ الٰہی کی وجہ سے بلند ہو گئی تھیں۔ کہ چیخیں مار رہے تھے اور اللہ تعالٰی نے ارشاد فرمایا کہ حضور اکرم ﷺ کی آواز سے اپنی آواز بلند نہ کرو۔ سورۃ حجرات آیت ٢
معلوم ہوا کہ صحابہ کرام رضوان اللہ تعالٰی علیہم اجمعین کا خوف الٰہی کے سبب چیخیں مارنا اور رونا غیر اختیاری تھا۔ عقل و شعور کے باعث یہ چیخیں مارنا وجد کے باعث تھا اور یہ بھی اقسام وجد میں سے ایک قسم ہے جس طرح علامہ آلوسی رحمتہ اللہ علیہ نے بیان کیا ۔


حدیث ٤ :
اسی طرح امام بخاری رحمتہ اللہ علیہ حضرت انس رضی اللہ تعالٰی عنہ سے روایت کرتے ہیں :

حضور اکرم ﷺ نے ایسا بے مثل خطبہ دیا جس کا مثل کوئی خطبہ میں نے کبھی نہیں سنا۔ اس خطبے میں فرمایا : اگر تم جانتے ، جو کچھ میں جانتا ہوں تو بہت کم ہنستے اور بہت زیادہ روتے۔ حضرت انس رضی اللہ تعالٰی عنہ فرماتے ہیں کہ اس کے اثر کے باعث صحابہ کرام نے اپنے چہرے چھپا لئے اور رونا گریا و زاری کرنا سسکیاں لینا شروع کیں۔

﴿بخاری شریف ، کتاب التفسیر باب قو له تعالٰی ’ لا تسئلوا عن اشیاء ‘ الآیۃ ج ٢ ص ٦٦٥﴾ 

اس روایت سے بھی وجد ظاہر ہوتا ہے کیونکہ خوف الٰہی کے باعث رونا ، سسکیاں لینا یہ بھی وجد کی قسموں میں سے ایک قسم ہے۔
یہاں تھوڑی سی وضاحت لازمی ہے ۔ کچھ لوگ یہ روایت پڑھ کے کہیں گے کہ یہ تو خشیت کی وجہ سے تھا پھر وجد کیسا ؟

تو جواب یہ ہے کہ یہی تو بات سمجھانے کی کوشش کی جا رہی ہے ۔ یہ بلکل خشیت کے باعث ہی تھا لیکن خوف و خشیت تو دل میں ہوتا ہے لیکن اس کے اثر کی وجہ سے جو حرکات صادر ہوتی ہیں۔ اسے وجد کہتے ہیں ۔
خوف و خشیت کی زیادتی کی وجہ سے بے اختیار آنسو نکل آتے ہیں کبھی آدمی چیخیں مارتا ہے اور کبھی منہ سے الفاظ جاری ہو جاتے ہیں بے اختیار کبھی جسم کانپنے لگتا ہے کبھی آدمی گر جاتا ہے اور تڑپنے لگتا ہے کبھی آدمی بیہوش ہو کہ گر جاتا ہے اور کئی اللہ کے نیک بندے تو فوت بھی ہو جاتے ہیں ۔ اور نماز میں بھی ایسی حرکات بے اختیار ہو جاتی ہیں فقہ کی کتابوں میں اسکو جائز کہا گیا ہے۔
اور جب خوشی عشق و محبت کی کیفیت غالب آجائے تو انسان بے اختیار رقص شروع کردیتا ہے کبھی کپڑے پھاڑ دیتا ہے اور کبھی دوڑنے لگتا ہے ۔

عشق الٰہی ، خوف الٰہی، عشق رسول ﷺ یا اپنے شیخ کی محبت یا کسی ولی اللہ کی محبت جیسی کیفیات جب کسی پہ غالب آجائیں تو اس وقت جو حرکات اس سے صادر ہوتی ہیں وہ وجد کہلاتی ہیں یہ بے اختیار ہوتی ہیں جیسے کھانسی اور چھینک وغیرہ جیسے افعال بے اختیار ہوتے ہیں ۔
اور آپ دیکھ سکتے ہیں کہ یہ اثرات اور کیفیات احادیث مبارکہ سے صحابہ کرام رضوان اللہ علیہم اجمعین سے تابعینؓ ، تبع تابعینؓ اور اولیائے کرامؓ سے ثابت ہیں ۔ پہلے بھی یہ بات کہی پھر وضاحت کرتے ہیں کہ ہم ہر گز جعلی صوفیاء کے رقص یا ریا کاری اور دکھلاوے کے وجد کے حق میں نہیں ہیں نہ ہی اسکو جائز سمجھتے ہیں بلکہ ان پہ فتوے بھی ہمارے اہل سنت و الجماعت کے اپنے علماء نے لگائے ہیں انشاءاللہ آگے پیش کیے جائیں گے ۔ 




حدیث ٥ :
حضرت ابن عباس رضی اللہ تعالٰی عنہ فرماتے ہیں :
جب رب الکریم نے اپنے نبی ﷺ پر یہ آیت کریم نازل کی جس میں اللہ تعالٰی فرماتا ہے ۔
ترجمہ:
’’اے ایمان والو! اپنے آپ کو اور اپنے اہل و عیال کو جہنم کی آگ سے بچاؤ‘‘
یہ آیت کریمہ ایک دن نبی کریمﷺ نے اپنے اصحاب کے سامنے تلاوت کی ایک نوجوان لڑکا سنتے ہی بے ہوش ہوگیا۔
نبی کریم ﷺ نے اس کے دل پر اپنا ہاتھ مبارک رکھا اس کا دل دھڑک رہا تھا نبی کریم ﷺ نے فرمایا !
کہو ’’ لا اِله الا اللہ ‘‘ اور اس کے ساتھ ہی جنت کی خوشخبری سنائی۔

﴿الترغیب والترھیب جلد ٤ ص ٢٣٣﴾



حدیث ٦ :
حضرت عقبہ بن مسلم رضی اللہ تعالٰی عنہ فرماتے ہیں کہ شفیا الاصجی نے فرمایا ہے کہ
میں مدینہ منورہ میں داخل ہوا میں نے ایک آدمی دیکھا جس کے ارد گرد بہت سے لوگ جمع ہوئے تھے۔ میں نے پوچھا یہ کون ہیں لوگوں نے جواب میں کہا یہ حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ ہیں شفیا الاصجی فرماتے ہیں کہ میں حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ کے قریب بیٹھ گیا ۔ آپ رضی اللہ عنہ لوگوں کو حدیث بیان کر رہے تھے۔ راوی بیان کرتے ہیں کہ جب لوگ چلے گئے تو میں نے عرض کیا کہ مجحھے کوئی ایسی حدیث بیان کریں جو آپ
رضی اللہ تعالٰی عنہ نے نبی کریم ﷺ سے سنی ہو اور یاد کی ہو ۔
آپ 
رضی اللہ عنہ نے فرمایا:
میں تم کو ایسی حدیث بیان کرونگا جو مجھے نبی کریم ﷺ نے بیان کی ہو جو میں نے سمجھی ہو اور یاد کی ہو ۔ جب آپ رضی اللہ عنہ سردار کونین ﷺ کے اسم شریف کو پہنچ جاتے تو بیہوش ہو جاتے۔ پھر جب بیدار ہوتے تو نبی کریم ﷺ کا نام لیتے ہی بے ہوش ہو جاتے ۔ پھر بیدار ہوتے اور اپنے ہاتھوں سے اپنے چہرے کو مسخ کرتے۔

﴿ جامع الترمزی ج ٦ ص ٦١ ابواب الزھد﴾
یہ حدیث شریف بھی اثبات وجد کیلئے قوی دلیل ہے اس لئے کہ غشی اور بے ہوشی بھی وجد کی انواع میں سے ایک نوع ہے ۔


حدیث ۷ :
’’ عن ابی سعید الخدری رضی اللہ تعالٰی عنہ ان رسول اللہ ﷺ قال : اکثر وا ذکر اللہ تعالٰی حتی یقولوا مجنون ‘‘

ترجمہ:

حضرت ابو سعید خدری 
رضی اللہ تعالٰی عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا:
اللہ کا ذکر اتنی کثرت سے کرو کہ لوگ تمہیں مجنون ﴿دیوانہ﴾ کہیں۔ 


احمد ابن حنبل المسند ج٣ ص ٦٨، ج ٣ ص ٧١
ابن حبان الصحیح ج ٣ ص ٩٩
ابو یعلٰی المسند ج ٢ ص ٥٢١
حاکم المستدرک ج ۱ ص ٦٧٧
بیھقی شعب الایمان ج ١ ص ٣٩٧
منذری الترغیب والتریب ج ٢ ص ٢٥٦
ھیثمی مجمع الزوائد ج ١٠ص ٧٥
قرطبی الجامع لاحکام القرآن ج ٢ ص ١٩٧
ابن کثیر تفسیر القرآن العظیم ج ٣ ص ٤٩٦

ایک اور روایت میں ہے :
’’ عن ابن عباس رضی اللہ تعالٰی عنہ قال : قال رسول اللہ ﷺ اذکرو اللہ ذکا یقول المنافقون : انکم تراؤون ‘‘

ترجمہ:

حضرت ابن عباس رضی اللہ تعالٰی عنہ بیان کرتے ہیں کہ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا:
اللہ کا ذکر اس قدر کرو کہ منافق تمہیں ریا کار کہیں ۔

الکنز الثمین فی فضیلۃ الذکر والذاکرین ص ٩٤
طبرانی المعجم الکیر ج ٢ ص ٨١
ابن رجب جامع العلوم والحکم ج ١ ص ٤٤٤
ابن کثیر ج ٣ ص ٤٩٦
ابو نعیم حلیۃ الولیاء و طبقات الاصفیاء ج ٣ ص ٨١


حدیث ٨ :حضرت انس رضی اللہ تعالٰی عنہ فرماتے ہیں کہ
نبی کریم ﷺ نے یہ آیت کریمہ تلاوت فرمائی۔
ترجمہ :
’’اور جہنم کا ایندھن لوگ اور پتھر ہیں ‘‘
پھر فرمایا! یہ آگ ہزار سال تک جلتی رہی حتٰی کہ سرخ ہو گئی پھر ہزار سال تک جل کر سیاہ ہوئی
نبی کریم ﷺ کے سامنے ایک کالا آدمی تھا اس نے چیخ مار کر رونا شروع کر دیا ۔ جبریل علیہ السلام تشریف لائے اور فرمایا :
یا رسول اللہ ﷺ آپ ﷺ کے سامنے رونے والا کون ہے ؟ نبی کریم ﷺ نے فرمایا : کہ یہ حبش کا ایک آدمی ہے ۔ آپ ﷺ نے اس کی اچھی صفت و مدح بیان فرمائی پھر فرمایا :
کہ اللہ تعالیٰ فرماتا ہے کہ : کسی انکھ سے میرے خوف کی وجہ سے آنسو نہیں بہتا مگر میں ضرور جنت میں اس کے لیے ہنسنا زیادہ کرونگا ۔

﴿ الترغیب والترھیب ج ٤ ص ٣٤۔٢٣٣ ﴾



حدیث ٩ :
امام ترمذی رحمتہ اللہ تعالٰی علیہ نے شمائل ترمذی میں حضرت عبد اللہ ابن عمر رضی اللہ عنہ سے ایک رویت نقل کی ہے :

ایک دفع حضور اکرم ﷺ کے زمانہ اقدس میں سورج گرہن ہو گیا آپ ﷺ نماز کیلئے اٹھے اور اتنا لمبا قیام فرمایا کہ محسوس ہوا کہ رکوع ہی ادا نہ فرمائینگے بعد اذاں رکوع ادا فرمایا رکوع بھی طویل فرمایا قریب تھا کہ سر مبارک حالت رقوع سے اٹھا نہ فرمائیں گے پھر سر مبارک اٹھایا اور پھر بہت دیر کھڑے رہے پھر سجدہ ادا فرمایا سجدہ بھی طویل فرمایا اور سجدوں کے درمیان جلسہ بھی نہایت طویل فرمایا۔ پھر دوسرا سجدہ ادا فرمایا یہ بھی طویل سجدہ تھا سجدے میں حضورﷺ اوہ اوہ فرما رہے تھے اور گریہ و زاری جاری تھی۔

﴿ رواہ الترمذی : ١٦٩ ، باب : ما جاء فی بکاء النبی ﷺ﴾


اور ابو داؤد شریف میں یہ الفاظ موجود ہیں : ﴿و قال فی سجدته اُف اُف﴾ حضور نبی اکرم ﷺ نے حالت نماز میں
 اُف اُف کہا۔

اس حدیث سے بھی وجد ثابت ہوتا ہے کہ آپ ﷺ کا حالت نماز میں اف اف کرنا کثرت خشیت کی وجہ سے ہے اور فقہائے کرام نے فقہ کی کتابوں میں لکھا ہے کہ اگر کوئی شخص حالت نماز میں اللہ کے خوف کی وجہ سے یا پھر جنت یا دوزخ کے خیال سے روتا ہے اور رونے میں اف و آہ کرتا ے یا الفاظ حاصل ہوتے ہیں اس سے نماز فاسد نہیں ہوتی کیونکہ یہ خوف عین اللہ کا خوف اور یاد الٰہی کی وجہ سے ہے ۔ اوپر پیش کی گئی علامہ آلوسی رحمتہ اللہ علیہ کی عبارت پڑھیں مزید اس پر بھی دلائل دیے جائیں گے۔ انشاءاللہ عزوجل


حدیث ١٠ :
امام ترمذی رحمتہ اللہ علیہ نے اسی باب میں حضرت مطرب بن عبداللہ بن شخیر رضی اللہ تعا لٰی عنہ سے روایت نقل کی ہے وہ اپنے والد سے :

’’ قال اتیت رسول اللہ ﷺ وھو یصلی ولجوفه ازیر کازیر المرجل من البکاء۔ و فی روایۃ ازیر الرحی‘‘ 

ترجمہ:
وہ فرماتے ہیں کہ میں حضور ﷺ کے قریب حاضر ہوا تو آپ ﷺ نماز ادا فرما رہے تھے آپ ﷺ کے سینہ مبارک سے ابلتی ہوئی ھانڈی کی طرح آواز آرہی تھی جو کہ آپ ﷺ کے گریہ کے سبب تھی۔

﴿رواہ الترمذی 
باب : ما جاء فی بکاء النبی ﷺ﴾

دوسری روایت میں یہ ہے کہ چکی گھومنے کی طرح آواز خارج ہو رہی تھی۔ 


شاہ ولی اللہ محدث دہلوی رحمتہ اللہ علیہ فرماتے ہیں :
بعض صوفیاء عظام پر جب خوف الٰہی غالب آجاتا ہے تو وہ رونے لگتے ہیں اور ان کے اعضاء حرکت کرتے ہیں جیساکہ :
حضور پاکﷺ جب رات کو نماز پڑھتے تو آپ ﷺ کے سینے مبارک سے ہانڈی کے جوش مارنے کی آواز آتی۔

﴿حجتہ اللہ البالغہ ج٢ ص ٩٩﴾


فتح القدیر میں اس حدیث شریف سے یہ دلیل اخذ کی ہے کہ:
یہ حدیث مبارکہ امام شافعی 
رضی اللہ تعالٰی عنہ پر حجت ہے اس لئے کہ امام شافعی رضی اللہ تعالٰی عنہ فرماتے ہیں کہ اہ اوہ اور رونا مطلقاً نماز کو فاسد کر دیتا ہے۔ جب ان سے حروف حاصل ہو جائیں حالانکہ یہ بات سب کو معلوم ہے کہ ھانڈی کے ابلنے سے حروف ضرور حاصل ہوتے ہیں اگر کوئی شخص کان لگا کر سن لے۔

﴿فتح القدیر شرح ھدایه: باب یفسد الصلٰوۃ وما یکره فیھا ج ١ ص ٣٤٦﴾


حدیث ١١ : امام ابن کثیر رحمتہ اللہ علیہ البدایہ والنہایہ میں یہ روایت نقل کرتے ہیں :

ابواراکہ بیان کرتے ہیں کہ میں نے فجر کی نماز حضرت علی رضی اللہ عنہ کے ساتھ پڑھی اور جب آپ دیئں جانب مڑے تو آپ ٹھہر گئے ، گویا آپ غمگین ہیں اور جب مسجد کی دیوار پر سورج ایک نیزہ بھر آیا تو آپ نے دو رکعت نماز پڑھی پھر اپنے ہاتھ کو پلٹ کر فرمایا’ خدا کی قسم میں نےمحمد مصطفیٰ ﷺ کے اصحاب کو دیکھا ہے اور آج میں ان کی مانند کسی چیز کو نہیں دیکھتا ‘ وہ صبح کو خالی پیٹ پرا گندہ مُو غبار آلودہ حالت میں اٹھتے‘ اور خدا کی خشنودی کی خاطر رات گزارتے اور کتاب اللہ کی تلاوت کرتے اور اپنے ہاتھوں اور پاؤں پر باری باری آرام کرتے اور 
صبح کرتے تو اس طرح جھومتے جیسے آندھی کے روز درخت جھومتا ہے اور ان کی آنکھیں اشک ریزی کرتیں حتٰی کہ ان کے کپڑے بھیگ جاتے ‘ خدا کی قسم لوگ غفلت میں رات گزار دیتے ہیں پھر آپ اٹھے اور اس کے بعد آپ کو مسکراتے نہیں دیکھا حتٰی کہ دشمن خدا ‘ فاسق ابن ملجم نے آپ کو قتل کر دیا۔

﴿ ابن کثیر، البدایہ والنہایہ ج ٨ ص ۱٤ ﴾




حدیث ١٢ :
اسی طرح امام بخاری رحمتہ اللہ علیہ نے حضرت جبیر بن مطعم رضی اللہ عنہ سے روایت کیا کہ :
قال ’’ سمعت النبی ﷺ یقرأ فی المغرب بالطور فلما بلغ ھٰذه الأیۃ ﴿ ام خلقوا من غیر شئ ام ھم الخالقون ﴾ کاد قلبی ان یطیر ‘‘

ترجمہ:

جبیر بن مطعم رضی اللہ تعا لٰی عنہ فرماتے ہیں کہ حضور نبی اکرم ﷺ مبارک نماز مغرب میں سورہ طور تلاوت فرما رہے تھے جب اس آیت کریمہ پر پہنچے ﴿ام خلقوا﴾ تو قریب تھا میرا دل اڑنے لگ جائے۔
﴿رواہ البخاری ج ۲ ص ۷۲۰ ﴾ 

یہ حدیث شریف بھی اثبات وجد پر صریح دلالت کرتی ہے اس لئے کہ دل کا اُڑ جانا بھی وجد کی ایک قسم ہے مگر چونکہ قلب جسم سے متصل ہے اور جسم عالم سفلی ہے اور قلب عالم علوی ہے لہٰذی قلب حالتِ وجد میں اڑنے کا تقاضا کرتا ہے۔ جبکہ جسم بر خلاف ہو تا ہے ، نتیجۃً غیر اختیاری فعل سر انجام پاتا ہے۔ 



حدیث ١٣ :حضرت ابن عمر رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں جب اللہ تعالیٰ نے یہ آیت کریمہ نازل فرمائی:
’’وَ اِذَا رَاَیْتَ ثَمَّ رَاَیْتَ نَعِیْمًا وَّ مُلْكًا كَبِیْرًا ‘‘
ترجمہ:

اور جب تو ادھر نظر اٹھائے ایک چین دیکھے
 اور بڑی سلطنت (سورۃ الدھر آیت ٢٠)

تو ایک حبشی نے کہا: یا رسول اللہ ﷺ کیا میری آنکھیں جنت کی نعمتیں اس طرح دیکھیں گی جس طرح آپ ﷺ کی آنکھیں دیکھیں گی؟
نبی کریم ﷺ نے فرمایا ہاں ! اس حبشی نے رونا شروع کر دیا حتیٰ کے اسکی روح اس کے جسم سے پرواز کر گئی۔ اور فوت ہوئے ۔
حضرت ابن عمر رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں کہ میں رسول ﷺ کو دیکھ رہا تھا کہ حبشی کو قبر میں رکھ رہے تھے ۔

﴿ الترغیب والترھیب ج ٤ ص ۳۹۹ ﴾
۔



حدیث ١٤ :
اسی طرح عبدالغنی
 نابلسی رحمتہ اللہ علیہ نے حدیقۃ الندیه پر علامہ شعرانی رحمتہ اللہ علیہ نے تنبیه المغترین میں روایت کی ہے :
’’حضرت میمون بن مہران رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں کہ حضرت سلمان فارسی رضی اللہ عنہ نے ایک قاری سے یہ آیت کریمہ سنی ﴿ وان جھنم لمو عداھم اجمعین ﴾ تو چیخ ماری اور دونوں ہاتھ سر پر رکھ لئے اور سر گردان و پریشان باہر نکل گئے اور یہ سمجھ نہیں رہے تھے کہ کس جانب جائیں، تین دن تک اسی کیفیت میں رہے ۔‘‘


﴿ حدیقۃ الندیه ص ١٠٩ ﴾


یہ چند ایک احادیث مبارکہ پیش کی ہیں اور ابھی بہت سی احادیث اور روایات کہ جن سے وجد کا ثبوت ملتا ہے آرٹیکل لمبا ہونے کے ڈر سے پیش نہیں کیں لیکن ضرورت پڑنے پر وہ بھی پیش کی جاسکتی ہیں ۔انکے بعد اب مزید کچھ اور حکایات و واقعات کہ جن سے تابعینؓ، تبع تابعینؓ اور اولیاءؓ کے وجد میں حالات اور کیفیات کا پتہ چلتا ہے ملاحظہ فرمائیے۔



١﴾ امام اعظم ابو حنیفہ رضی اللہ تعالٰی عنہ :
امام ابن حجر مکی الھیثمی رحمتہ اللہ علیہ الخیرۃ الحسان میں جلیل القد ہستی امام اعظم ابو حنیفہ رضی اللہ تعالٰی عنہ کا ایک واقعہ نقل کرتے ہیں :

’’ ایک دن حضرت امام ابو حنیفہ رحمتہ اللہ علیہ نے فجر کی نماز میں اس آیت مبارکہ کی تلاوت کی ﴿ولا تحسبن اللہ غافلا عما یعمل الظلمون﴾ تو لرزنے لگے یہاں تک کہ لوگوں نے ان کا لرزنا دیکھ لیا۔ ‘‘

﴿الخیرۃ الحسان ص ٣٦ فصل ١٥﴾
یہ واقعہ بھی نماز میں وجد کے وارد ہونے کیلئے قوی دلیل ہو گیا 


۲﴾ امام شافعی 
رضی اللہ تعالٰی عنہ:
اسی طرح ملا علی قاری رحمتہ اللہ علیہ نے مرقات شرح مشکوٰۃ میں تحریر کیا ہے :

’’روایت ہے کہ امام شافعی رحمتہ اللہ علیہ نے ایک قاری کو یہ آیت کریمہ تلاوت کرتے ہوئے سنا ﴿ھذا یوم لا ینطقون ولا یؤذن لھم فیعتذرون﴾ تو امام شافعی رحمتہ اللہ علیہ لرزنے لگے اور بے ہوش ہو گئے۔‘‘

﴿مرقاۃ شرح مشکوٰۃ ج١ ص ٦٦﴾ 

جلیل القدر مجتہد جو تبع تابعین میں سے ہیں ایک مسلک کے امام ہیں ان پر جو کیفیت طاری ہوئی خاصکر قرآن کریم کی تلاوت سنتے وقت یہ بھی وجد کی اثبات پر قوی دلیل ہے کہ بزرگان دین پر وجد کی حالت طاری ہوتی تھی۔ 


٣﴾ جلیل القدر تابعی ربیع بن اخثم 
رضی اللہ تعالٰی عنہ:
امام غزالی احیاء العلوم الدین میں حضرت ربیع بن اخثم تابعی رحمتہ اللہ علیہ کا واقعہ نقل کرتے ہیں :

’’ ایک دن ربیع بن اخثم رحمتہ اللہ علیہ حضرت ابن مسعود رضی اللہ تعالٰی عنہ کے ساتھ لوہار کی بھٹی کے پاس سے جا رہے تھے ، جب ربیع بن اخثم نے لوہار کی بھٹی کو دیکھا کہ اس کو ہوا دی جا رہی ہے اور آگ کے شعلے لپک رہے تھے تو چیخ ماری اور بیہوش ہو کر گر گئے ۔ حضرت عبداللہ ابن مسعود رضی اللہ تعلٰی عنہ ان کے قریب کھڑے تھے۔ اس دوران نماز کا وقت ہو گیا اور آپ ہوش میں نہ آئے تو حضرت عبداللہ ابن مسعود رضی اللہ تعلٰی عنہ نے آپ کو پیٹھ پر اٹھا کر ان کے گھر تک پہنچا دیا۔ دوسرے دن صبح تک وہ بے ہوش رہے اسی دوران پانچ نمازیں ان سے قضاء ہوئیں بعد ازاںحضرت عبداللہ ابن مسعود رضی اللہ تعلٰی عنہ نے فرمایا کہ خدا کی قسم خوفِ الٰہی کے باعث ان پر یہ کیفیت طاری ہوئی ۔ ‘‘

﴿احیاء العلوم ج ١ ص ١٧١﴾



٤﴾ زراہ بن اوفی تابعی رضی اللہ تعالٰی عنہ:
امام غزالی رحمتہ اللہ تعلٰی علیہ نے زراہ بن اوفی تابعی رضی اللہ تعالٰی عنہ کا واقعہ نقل کیا ہے :

روایت ہے کہ زراہ بن اوفی رضی اللہ تعالٰی عنہ جو تابعی ہیں لوگوں کو مقام رقہ میں امامت کروایا کرتے تھے جب یہ آیت کریمہ تلاوت کی ﴿ فاذا نقر فی الناقور ﴾ تو دورانِ نماز محراب میں گر گئے اور وفات پا گئے ۔

احیاء العلوم ج ٢ ص ٢٩٧
الترغیب والترھیب ج: ٤ ص ٤٧٤


٥﴾ امام شبلی رحمتہ اللہ علیہ:
ایک دن امام شبلی رحمتہ اللہ علیہ مسجد میں امام کے پیچھے ماہ رمضان میں نماز عشاء پڑھ رہے تھے امام نے یہ آیت کریمہ تلاوت فرمائی ۔ 
’’وَ لَىِٕنْ شِئْنَا لَنَذْهَبَنَّ بِالَّذِیْۤ اَوْحَیْنَاۤ اِلَیْكَ‘‘
 ﴿سورۃ بنی اسرائیل آیت نمبر ٨٦﴾

تو امام شبلی رحمتہ اللہ علیہ نے وجد کی وجہ سے ایک چیخ ماری لوگوں نے یہ خیال کیا کہ امام شبلی رحمتہ اللہ علیہ وفات پا گئے ہیں ، آپ رحمتہ اللہ علیہ کا چہرہ سرخ ہو گیا اور باقی اعضاء حرکت میں آ گئے۔

﴿احیاء العلوم ج ٢ ص ۲٩٤﴾


٦﴾ ابو القاسم قشیری رحمتہ اللہ علیہ :
حضرت علامہ عبدالوہاب شعرانی رحمتہ اللہ علیہ انوار القدسیہ میں جناب ابو القاسم قشیری رحمتہ اللہ علیہ کا ایک قول نقل کرتے ہیں، وہ فرماتے ہیں :

اشعار اور قوالی ہر وقت نفع بخش ہے خاص کر ضعیفوں کے لیے مفید ہے اس لیے کہ سماع سے ہر عضو پر خاص اثر ہوتا ہے آنکھیں اس کے اثر سے روتی ہیں زبان پر اثر ہو تو وہ چیخ مارتی ہے ۔ ہاتھ متاثر ہو تو کپڑے پھاڑے جاتے ہیں اور چہرے پر تھپڑ مارا جاتا ہے اور جب پاؤں پر اثر ہو تو رقص کرنے لگتے ہیں۔

﴿انوار القدسیہ ج۱ ص۱٨٦﴾


٧﴾ حضرت جنید بغدادی رحمتہ اللہ علیہ :

حضرت جنید بغدادی رحمتہ اللہ علیہ سے پوچھا گیا کہ کچھ لوگ دوران وجد بے قابو ہو جاتے ہیں اور وجد میں گھومتے ہیں اس کے بارے میں آپ رحمتہ اللہ علیہ کی کیا رائے ہے ؟

انہوں نے فرمایا ان لوگوں کو اللہ کی محبت میں چھوڑ دو کیونکہ طریقت نے انکے دل کاٹ دیے ہیں اگر تم ان کی لزت سے آشنا ہو جاؤ تو چیخنے چلانے اور کپڑے پھاڑنے میں ان کو معزور سمجھو گے۔


﴿رسائل ابن عابدین شامی ج ١ ص ١٧٢﴾



٨﴾ حضرت شیخ عبدالقادر جیلانی غوث اعظم رضی اللہ عنہ :
محبوب سبحانی شیخ عبدالقادر جیلانی رضی اللہ عنہ کی سیرت کی کتابوں میں لکھا ہے کہ آپ رضی اللہ عنہ اپنی مجلس میں تقریر فرمانے کے بعد جب توجہ فرماتے تو پوری مجلس پہ وجد و حال طاری ہو جاتا آپ کی تو نگاہ اور توجہ کا یہ عالم تھا کہ ٢ سے لیکر ۷۰ جنازے اٹھتے تھے ۔ لیکن آج جب آپ کے غلام کسی کو توجہ فرمائیں اور اسکی وجہ سے ہلکا سا وجد ہو تو لوگ کرنٹ سے تشبیہ دیتے ہیں اور لاعلمی میں کئی چیزوں کا انکار کر جاتے ہیں ۔

کتاب بہجتہ الاسرار میں حضور غوث پاک رضی اللہ عنہ کا ارشاد پاک ہے :

’’الخوف للمزنین والرھبة للعابدین ولخشیة للعالمین والوجد للمحبین۔‘‘

ترجمہ: 
یعنی، خوف گنہگاروں کے لیے ہے اور رہبت عابدوں کے لیے اور خشیت عالموں کے لیے اور وجد عاشقوں کے لیے ہے۔

﴿ بہجتہ الاسرار ﴾ 



٩﴾ حضرت خواجہ نظام الدین رحمتہ اللہ علیہ :
حضرت مولانا جامی رحمتہ اللہ علیہ نفحات الانس میں نقل کرتے ہیں کہ:

حضرت خواجہ نظام الدیں رحمتہ اللہ علیہ فرماتے ہیں کہ قیامت میں کوئی کسی چیز پر فخر کرے گا اور کوئی کسی پر میں صاحب وجد و حال امیر خسرو رحمتہ اللہ علیہ کے سوز سینہ پر فخر کروں گا ۔

﴿ نفحات الانس ﴾



١٠﴾ خواجہ قطب الدین بختیار کاکی رحمتہ اللہ علیہ :
خواجہ قطب الدین بختیار کاکی رحمتہ اللہ علیہ اور حضرت قاضی حمید الدین رحمتہ اللہ علیہ مجلس سماع میں حاضر تھے ، اور قوالوں نے شعر
کشتگان خنجر تسلیم را ھر زماں از غیب جان دیگر است


پڑھا اس شعر پر حضرت خواجہ قطب الدین علیہ رحمتہ کو وجد ہوا۔ آپ رحمتہ اللہ علیہ چاہتے تھے کہ نعرہ ماریں مگر قاضی حمید الدین رحمتہ اللہ علیہ نے آپ رحمتہ اللہ علیہ کے منہ کے آگے ہاتھ دے دیا اور کہا جہاں جل جائے گا۔


﴿سیر المشائخ﴾



یہ چند ایک واقعات پیش کئے ہیں اور ایسے کئی واقعات ہیں جن کو نہیں لکھا گیا کیونکہ سب کو لکھنا بہت مشکل ہے اس لئے مختلف ادوار کی معروف و مشہور شخصیات جن میں تابعینؓ تبع تابعینؓ مجتہدینؓ اور اولیائے کرامؓ شامل ہیں کے واقعات نقل کیے ہیں تاکہ یہ بات ظاہر ہو جائے کہ وجد و حال نبی کریم ﷺ سے لے کر آج تک اس امت میں بلکہ ہم سے پہلی امتوں میں بھی موجود تھا
اور وھابیہ کا اس نعمت سے انکار اس لئے ہے کیونکہ یہ اول درجہ کے بے وقوف جاہل ہیں اور ان کی عقلوں پہ شیطان کا قبضہ ہے 


ان کے لئے امام غزالی کا ایک قول نقل کروں گا :
’’یعنی جو شخص سماع اور وجد کے اثرات سے انکار کرتا ہے تو یہ اس کی اپنی کوتاہ علمی ہے ۔ اس شخص کے پاس وہ علم نہیں جسکے ذریعے وہ صوفیاء کرام کے احوال جان سکے ایسے شخص کی مثال اس ہجڑے کی طرح ہے جو اپنی نامردی اور قوت شہوت کی عدم موجودگی کے باعث لزت جماع سے انکار کرے۔‘‘

﴿کیمیائے سعادت رکن دوم ص ١٩٨﴾۔


ویسے تو قرآن و حدیث سے ہی وجد ثابت ہے لیکن آگے کچھ مزید علماء ، فقہاء اور محدثین سے اس کے جائز ہونے کے ثبوت دیے جائیں گے کیونکہ میں نے آن لائن ایک آرٹیکل پڑھا ہے جس میں منکرین نے نہ صرف صحیح احادیث کو ضعیف ثابت کرنے کی کوشش کی ہے بلکہ فقہاء اور علماء اور محدثین کی کتابوں سے عبارات کو غلط طریقے سے پیش کر کے یہ ثابت کرنے کی کو شش کی گئی ہے وجد ناجائز ہے ۔ لہٰذا انہی فقہاء کی کتابوں سے وجد کے دلائل بھی پیش کئے جائیں گے اور انشاءاللہ وھابیہ کی خیانتیں اور جال سازیاں بھی کھول کر بیان کی جائیں گی انشاء اللہ عزوجل

کریڈٹس:
سب سے پہلے میں شکر گزار ہوں عامر بھائی کا اور فدائی سیفی بھائی کا اور جس جس نے بھی انگلش والے آارٹیکل کو لکھا یا لکھنے میں مدد کی اور بلخصوص جو پہلی ٢ دو احادیث جو میں نے قوٹ کی ہیں ان کو وھابیہ نے ضعیف ثابت کرنے کی ناکام کوشش کی اور ان حضرات نے نہ صرف ان کو جواب دیا بلکہ ان احادیث کی تحقیق پیش کر کے وھابیہ کی ان احادیث کو ضعیف ثابت کرنے کی خطرناک سازش کو ناکام کر دیا۔ باقی انشاءاللہ علماء کی کتابوں کی عبارات کی خیانتوں سے بھی پردہ اٹھا دیا جائے گا ۔
اور عثمان رضوی بھائی آپکا بھی بہت شکریہ کے آپنے اس پوسٹ کو چیک کر کے غلطیاں دور کروائیں۔
__________________




علماء، محدثین اور فقہاء سے 


علامہ ابن عابدین شامی رحمتہ اللہ تعالٰی علیہ :اسی طرح علام محقق اور مدقق سید محمد آمین افندی شہیر بابن عابدین شامی رحمتہ اللہ علیہ جو فقہ حنفی کے بہت بڑے عالم اور فقیہ گزرے ہیں آپ رحمتہ اللہ علیہ کے فتاوای سے بعض منکرین حوالہ دیتے ہیں جس میں علامہ شامی رحمتہ اللہ علیہ نے رقص کو حرام قرار دیا ہے ۔
یاد رہے انہوں نے جس رقص کو حرام قرار دیا ہے وہ جھوٹے اور جعلی صوفیاء کا رقص ہے یا کہ ایسا رقص جو شہوات نفسانی میں ہیجان پیدا کرے ۔ جبکہ سچے صوفیاء کرام جو معرفت خداوندی سے اسرار اور واصلین ہیں ان کے رقص و وجد کو انہوں نے حرام و منع نہیں فرمایا۔

علامہ شامی رحمتہ اللہ علیہ اپنی تصنیف مجموعہ رسائل میں وجد و تواجد اور تمایل اور کپڑے پھاڑنے کے بارے پیں لکھتےہیں 
:
’’ علامہ شامی فرماتے ہیں کہ ہم صادق سادات صوفیہ کرام رحمتہ اللہ علیہ کے بارے پیں زبان درازی نہیں کر سکتے اس لئے کہ یہ تمام اخلاق رذیلہ سے مبرا ہیں۔ یہ پاک باطن لوگ ہیں۔ امام طائفتین سیدنا جنید بغدادی رحمتہ اللہ علیہ سے کسی نے سوال کیا کہ بعض صوفی ایسے ہیں جو تواجد کرتے ہیں۔ حضرت جنید بغدادی رحمتہ اللہ علیہ نے فرمایا کہ اللہ تعالٰی کے عشق میں انہیں چھوڑ دو کہ خوشحالی کریں اسلئے کے یہ ایک ایسی قوم ہے کہ طریقت نے ان کے دل پھاڑ دئے ہیں اور مصیبتیں برداشت کرتے ہوئے ان کے دل ٹکڑے ٹکڑے ہو گئے ہیں اب ان کے حوصلے تنگ ہو گئے ہیں۔ آہ کے ساتھ سانس لیتے ہیں ان پر کوئی حرج نہیں۔ اس حالت کی دائمیت کے لئے اگر تمہیں ان کی حالت حاصل ہو جائے اور انوار و تجلیات کا مزہ حاصل ہو جائے تو ان چیخوں اور نعروں میں تم بھی شامل ہو کر اپنے کپڑے پھاڑ ڈالو ۔ تم ان کو انکے چیخیں مارنے اور کپڑے پھاڑنے میں معزور سمجھو۔
اسی طرح حضرت ابن کمال پاشا صاحب سے اسی مسئلے کے بارے میں سوال ہوا تو آپ نے فرمایا کہ حضرت جنید بغدادی رحمتہ اللہ علیہ نے جواز کا فتویٰ دیا ہے۔ آپ نے اپنے شعر میں فرمایا :
ما فی التواجد ان حقیقت من حرج والتمایل ان اخلصت من باس 

اس شعر میں یہ فرمایا ہے کہ تواجد کرنے میں کوئی حرج اور نہ ہی جسم کے ہلنے میں کوئی حرج ہے جبکہ باطنی علتوں سے پاک لوگوں میں یہ آجائے۔
وجد کی وجہ سے اٹھ کر بھاگنا بھی جائز ہے اسلئے کہ اپنا مالک و مولٰی جب بلائے تو انہیں اپنے سر کے بل بھاگنا چاہئے۔ محفل ذکر و محفل سماع میں کامل عارفوں کے لئے وجد و رقص کی رخصت ہے کیونکہ یہ لوگ اپنا قیمتی وقت بہترین اعمال میں صرف کرتے ہیں ۔طریقت کے سالکین ہوتے ہیں جو اپنے نفسوں کو قبیح اعمال کرنے سے منع کرتے ہیں ۔ وہ ان صفات سے متصف ہوتے ہیں کہ جب صوفیہ کرام سنتے ہیں تو اپنے پروردگار کی جانب سے سنتے ہیں ۔ جب اللہ کا ذکر کرتے ہیں تو روتے ہیں اور جب کبھی اللہ کا شکر ادا کرتے ہیں تو خوش ہوتے ہیں۔ جب محبوب حقیقی کی جانب سے تجلیات و انوارات کا مشاہرہ کرتے ہیں تو آرام پاتے ہیں۔ جب شوق سے اللہ کا ذکر کرتے ہیں تو روتے ہیں اور جب محبوب حقیقی کا مشاہدہ کرتے ہیں تو آرام پاتے ہیں ۔اور جب قرب کے مراتب میں انہیں حصہ نصیب ہوتا ہے تو اس میں سیر کرتے ہیں اور بلند مقامات طہ کرتے ہیں ۔
جب ان پر وجد غلبہ کرتا ہے تو اللہ تعالٰی کی اردات و واردات سے بعض سالکین پر ہیبت اور تجلیات کا عروج ہوتا ہے تو گر پڑتے ہیں ، یا بے دم ہو جاتے ہیں ۔بعض سالکوں پر لطف خداوندی کی انوار نازل ہوتے ہیں تو خوشی کا اظہار کرتے ہیں بعض سالکین پر قرب خداوندی اور مطلع جب ظاہر ہوتا ہے تو سکر ﴿مستی﴾ کی کیفیت طاری ہوتی ہے تو اپنے جسم اور جان سے بے خبر ہو جاتے ہیں ﴿جسے مقام سکر اور مقام غیبت کہا جاتا ہے﴾ یہ تمام مذکور حالات ثابت اور جائز ہیں ۔ یہی مجھے جواب دینے میں ظاہر ہوا ہے اور اللہ تعالٰی حق بات پر خوب عالم ہے ۔

شعر : جس کسی کو صحیح وجد نصیب ہوا ہو۔ تو اسکو مغنی کے گیت بجانے کی صرورت نہیں کیونکہ اسکو اللہ تعالٰی کی ذات اقدس سے ازلی مستی نصیب ہوتی ہے اور شراب کے برتن کے بغیر اسے حقیقی شراب محبت کا دائمی سکر نصیب ہوتا ہے ۔۔۔ ‘‘

﴿ مجموعۃ الرسائل ج: ١ ص: ١٧٣ و ایضا فتاوی رد المحتار ج: ٣ ص: ٣٠٧﴾ 



علامہ مفتی سید احمد طحطاوی حنفی مصری رحمتہ اللہ علیہ :
جلیل القدر فقہی علامہ مفتی سید احمد طحطاوی حنفی مصری رحمتہ اللہ تعالٰی علیہ حاشیہ طحطاوی علی الدر المختار میں وجد ، رقص اور سماع ذکر کے بارے میں فرماتے ہیں :

’’ فقہاء کرام میں سے بعض فقہاء کرام رقص سے منع نہیں کرتے کیونکہ انہوں نے خود شہود کی لذت کو پالیا ہے جس وقت سالک پر وجد غلبہ پاتا ہے۔ اور یہ فقہاء کرام اس حدیث تقریری سے استدلال کرتے ہیں کہ جعفر ذوالجناحین کو رسول اکرم ﷺ نے فرمایا : آپؓ کے اخلاق و شکل و شباہت مجھ ﷺ سے مشابہت رکھتے ہیں تو اس خطاب کے سننے سے حضرت جعفرؓ ایک پاؤں پر چلنے لگے اور دوسری روایت میں ہے کہ اس خطاب کی لزت سے رقص اور دوران کرنے لگے اور نبی اکرمﷺ نے انؓ پر انکار نہیں فرمایا ۔ پس ان فقہاء کرامؓ نے اس حدیث کو صوفیہ کرام کے رقص و دوران کے اثبات کیلئے ماخذ استدلال بنایا ہے کیونکہ صوفیہ کرام بھی محافل ذکر اور مجالس سماع میں وجد کی لزت کی وجہ سے ایسا ہی کرتے ہیں ۔فتاوی تاتارخانیہ میں ہے کہ مغلوب الحال سالک کیلئے حرکات اور چیخنا جائز ہے جبکہ اس کی حرکات مرتعش کی طرح غیر اختیاری ہوں ﴿ اور اگر مشابہت بالمجذوبین کی وجہ سے اختیاری حرکات کثیرہ کرتا ہے جو کہ تواجد سے مسمی ہے تو نماز کے اندر ناجائز اور نماز کے باہر جائز ہے کما صرح بہ النابلیسی رحمتہ اللہ علیہ فے الحدیقۃ ﴾ اسی طرح کا فتویٰ علامہ بلقینی رحمتہ اللہ علیہ اور برہان الدین انباسی رحمتہ اللہ علیہ نے بھی دیا ہے ۔ ‘‘

﴿حاشیہ الطحطاوی علی درالمختار ج: ٤ ص: ١٧٦ تا ١٧٧﴾


علامہ سید احمد طحطاوی رحمتہ اللہ تعالٰی علیہ نے شرح مراقی الفلاح میں وجد کے اسباب کا حکم دیا ہے اور فرمایا ہے ﴿ مجمع الانھر ﴾ میں وجد کی بہت سی قسمیں ہیں جہاں اختیار سلب ہو جاتا ہے۔ مطلق انکار کیلئے کوئی وجہ نہیں ۔

﴿حاشیہ الطحطاوی علی مراقی الفلاح ص: ١٧٤ ، قبیل باب مایفسد الصلوٰۃ ﴾ 




علامہ شیخ عبدالغنی نابلیسی حنفی رحمتہ اللہ علیہ :
اسی طرح علامہ مفتی ، فقیہ افخم علامہ شیخ عبدالغنی نابلیسی حنفی رحمتہ اللہ علیہ اپنی کتاب حدیقۃ الندیہ شرح طریقہ محمدیہ ﷺ میں تحریر فرماتے ہیں کہ:

’’ اور خبردار رہے کہ متن حدیقۃ میں فقہاء اور علماء کی جو عبارات تردید وجد کے بارے میں میں مذکور ہوئیں تمام کی تمام طائفہ متصوفہ ﴿ خلاف شریعت ناقص پیروں ﴾ کے حق میں ہیں۔ اور انہیں پر محمول ہیں۔ پس تم ان عبارات تنقیدیہ کو ہر شخص پر چسپان نہ کرو کہ متصوفہ کے ساتھ مشابہت صوری کی وجہ سے کامل مکمل اشخاص کو بھی ان پر قیاس کیا جائے کیونکہ شیطان انسان کیلئے ظاہر دشمن ہے ﴿ پس مذکورہ قیاس مع الفارق شیطان کی مداخلت کا سبب ہے﴾ ورنہ اولیاء صادقین کا وجد و تواجد اس زمانہ میں اور آئندہ زمانہ میں بھی گزشتہ زمانے کے موافق نور اور ہدایت ہے اور اللہ تعالٰی کی توفیق کا اثر ہے اور اللہ تعالٰی کی خاص مہربانی اور عنایت ہے ۔۔۔۔

﴿حدیقۃ الندیه شرح طریقه محمدیه ج: ٢ ص: ٥٢٣﴾
طویل ہونے کی وجہ سے پوری عبارت نقل نہیں کی صرف پہلا حصہ نقل کیا ہے باقی تفصیلاً شیخ عبدالغنی نابلیسی رحمتہ اللہ علیہ نے بزرگوں کے واقعات سے دلائل دئے ہیں وجد پہ۔
اس عبارت میں 
شیخ عبدالغنی نابلیسی رحمتہ اللہ علیہ نے وضاحت فرما دی ہے کہ فقہاء اور علماء کی جو عبارات تردید وجد کے بارے میں ہیں جن کو وھابی منکرین بطور دلیل پیش کرتے ہیں جیسے امام قرطبی ، علامہ شامی اور صاحب روح المعانی اور فتاوی عالمگیری وغیرھا کی عبارات جو وھابی پیش کرتے ہیں وہ سب کی سب خلاف شریعت ناقص پیروں اور جعلی صوفیاء کے حق میں ہیں نہ کہ حقیقی صوفیاء کے وجد پہ ۔ بلکہ خود انہی علماء اور فقہاء نے اسلی وجد کو نہ صرف جائز کہا ہے بلکہ وہ خود بھی اس کیفیت سے واقف ہیں جیسا کہ آپ انکی عبارات میں پڑھ سکتے ہیں اور وھابیہ کا ان کی دوسری عبارات کو غلط انداز میں صوفیاء کے اوپر چسپانا ان کی جال سازی، دجل اور فریب ہے ۔ 

مزید آگے وھابیہ کی خیانتوں کا رد اور ان کے اپنے گھر سے وجد کے دلائل دیے جائیں گے ۔



فتاوی ہندیہ ﴿عالمگیری﴾ : 
اسی طرح وھابیہ فتوی عالمگیری کا بھی حوالہ دیتے ہیں جس میں جعلی صوفیاء کے رقص اور ناچ گانے کی تردید کی گئی ہے اور اپنی شیطانی عادتوں سے مجبور وھابی یہاں بھی عوام کو دھوکا دینے کی کوشش کرتے ہیں ۔ ملاحظہ کیجئے فتاوی علمگیری کی عبارت جس میں واضح طور پر اصلی اور جعلی صوفیاء کے درمیان فرق کر کے جعلی صوفیاء کے رقص کا رد کیا گیا ہے :

’’ حقیقی عارفوں کے زمانے میں بہت مرتبہ شعر بنتا جس کا معنی انکے حال کے موافق ہوتا تو جس کا دل نرم ہوتا تو وہ اس شعر کے ساتھ موافقت کرتا تو کئی دفعہ اس کی عقل پر مدہوشی آجاتی اور بے اختیار کھڑے ہو جاتا اور اس سے بے اختیار حرکات صادر ہو جاتیں اور یہ بعید نہیں کہ یہ کام جائز کام ہے اور اس پر مواخذہ نہیں اور حقیقی مشائخ طریقت پر یہ گمان نہیں ہو سکتا۔ اور ہمارے زمانے میں فاسق جاہلوں کی طرح خلاف شرع امور کرتے ہیں حلانکہ یہ فاسق لوگ اہلِ دین اور مشائخ حقیقی کی دلیل پکڑتے ہیں جو کہ خلاف شرع کام کرتے ہیں جبکہ صوفیہ کرام رحمتہ اللہ تعلٰی علیہم تو ان کی طرح نہ تھے ، اسی طرح جواہر الفتاوی میں بھی لکھا ہے ۔۔۔ ‘‘

﴿فتاوی ھندیه ج: ٥ ص: ٣٥٢ ، باب ١٧﴾


تو اس عبارت سے فتاوی ہندیہ کی دوسری عبارت کا محمل بھی معین ہوا۔ جس میں سماع، رقص اور وجد پر رد کیا ہے۔ آپ دیکھ سکتے ہیں کہ فتاویٰ ہندیہ کی اس عبارت میں واضح طور پر اصلی اور جعلی صوفیاء کا فرق کر کے رد کیا گیا ہے اور جعلی صوفیاء کے ناچ گانے کو ہی ناجائز کہا گیا ہے جبکہ اصلی صوفیاء کرام کے رقص اور وجد کو جائز کہا گیا ہے ۔ وھابیوں کی عادت ہے کہ عوام کو دھوکہ دینے کے لئے نفی کی عبارات لیتے ہیں اور ان کو حقیقی صوفیاء کرام پر چسپاتے ہیں اور حق کو چھپاتے ہیں اور لوگوں کو دھوکہ دیتے ہیں ۔ 

فتاوی ھندیه کی وہ عبارت جس میں رقص و سماع کی تدید کی گئی ہے وہ یہ ہے :
’’ السماع والقوال والرقص الذی یفعله المتصوفۃ فی زماننا حرام لا یجوز القصد الیه والجلوس علیه ‘‘

یاد رکھیں یہ بات کہ ایک صوفیہ کرام ہوتے ہیں اور ایک متصوفہ 

متصوفہ وہ ہوتے ہیں جو تصوف کا جھوٹا دعویٰ کرتے ہیں اور نہ شریعت کے ظاہر پر عمل پیرا ہوتے ہیں اور نہ ہی باطن کے حال سے واقف ہوتے ہیں بلکہ دھوکے کے شیخ اور ریا کار اور فاسق ہوتے ہیں اور تصوف کو اپنے عیب چھپانے کے لئے بطور پردہ استعمال کرتے ہیں تو ایسے لوگوں کا رقص و سماع و تواجد بلکل حرام ہے لہذا جن مقامات پر فقہاء کرام نے تردید کی ہے تو وہ سب ان متصوفہ پر محمول ہے تو ان دونوں کے درمیان فرق کرنا لازمی ہے ، اور فتاوی ہندیہ میں جس رقص سماع کی تردید کی ہے تو وہاں ﴿ المتصوفہ فی زماننا ﴾ کی قید موجود ہے ۔ اور متصوفہ کی تردید میں کوئی نزع نہیں ہے ۔۔ 



حضرت مجدد الف ثانی شیخ احمد سرہندی حنفی رحمتہ اللہ علیہ :
اسی طرح میرے آقا !! امام ربانی سیدنا مجدد و منور الف ثانی شیخ احمد سرہندی نقشبندی حنفی رحمتہ اللہ تعالٰی علیہ مکتوبات شریف میں فرماتے ہیں :

’’ اے بیٹے ! عشق کے شور اور ولولہ اور محبت اور شوق سے بھرے ہوئے نعرے اور درد کی چیخیں اور وجد و تواجد اور رقص یہ تمام حالات ظلال کے مقام میں آتے ہیں۔ ظلی تجلیات کے ظہور کے وقت یہ وارد ہوتے ہیں ۔۔ ‘‘

﴿مکتوبات شریف ، ج: ۱
 حصہ: ٥ مکتوب : ٣٥٢﴾ 



علامہ حامد بن علی بن عبدالرحمٰن آفندی عمادی حنفی رحمتہ اللہ علیہ :
اسی طرح علامہ حامد بن علی بن عبدالرحمٰن آفندی حنفی رحمتہ اللہ علیہ مفتی دمشق و شام نے علامہ جلال الدین دوانی رحمتہ اللہ علیہ نے ﴿شرح ھیاکل نور ﴾ کے حوالے سے لکھا ہے کہ:

’’ انسان کبھی شرعی عبادات ادا کرنے کی وجہ سے پاکیزہ انوار کے لئے مستعدد بلکہ تجرید محققین اولیاء اپنے اندر پاکیزہ انوامستی کا مشاہدہ کرتے ہیں اس کی وجہ سے وہ حرکات کا باعث بنتا ہے تو وہ حرکت میں لگ جاتے ہیں۔ رقص اور تالیاں بجانا یوں بھاگنا دوڑنا اس طرح کی حرکتیں ان سے سرزد ہوتی ہیں کیونکہ ان پر انوار کا نزول ہوتا ہے یہاں تک کہ ان کا حال ختم ہوجاتا ہے کسی سبب کے ساتھ اور عام سالکوں کا تجربہ اس پر گواہ ہے ۔۔۔ ‘‘

﴿تنقیح فتاوی حامدیه ج: ٢ ص: ٣٥٤ ، باب الحظر والاباحۃ﴾



علامہ خیر الدین رملی حنفی رحمتہ اللہ علیہ :
اسی طرح علامہ خیر الدین رملی حنفی رحمتہ اللہ علیہ نے فتویٰ خیریہ ﴿ نفع البریہ ﴾ میں فتویٰ تنقیح الحامدیہ میں وجد کے بارے میں لکھا ہے :

’’ رقص میں فقہاء کرام کا کلام ہے بعض منع کرتے ہیں اور بعض نہیں کرتے۔ کب جب شہود کی لزت موجود ہو اور سالک پر وجد کی کیفیات طاری ہوں اور وہ دلیل کے طور پر حضرت جعفر طیار رضی اللہ تعالٰی عنہ کا واقعہ جواز کی دلیل بناتے ہیں۔ جب رسول اللہ ﷺ نے ان سے فرمایا : آپ شکل و شباہت اور اخلاق میں میرے مشابہ ہیں۔ ایک اور جگہ آپ ﷺ نے فرمایا : اوروں میں جعفر رضی اللہ تعالٰی عنہ مجھ ﷺ سے زیادہ مشابہت رکھتے ہیں۔ اخلاق میں بھی اور شکل صورت میں بھی۔ یہ خطاب سن کر حضرت جعفر ؓ نے ایک پاؤں پر بھاگنا شروع کر دیا۔ دوسری روایت میں ہے کہ حضرت جعفرؓ نے رقص شروع کر دیا۔ رسول اللہ ﷺ نے اس رقص کو منع نہیں کیا ۔ یہ واقعہ اہل تصوف کے نزدیک ایک دلیل ہے جب ذکر و سماع میں لزت محسوس کرے۔ فتویٰ تاتارخانیہ میں جواز کے دلائل موجود ہیں۔ اسی طرح امام بلقینی اور علامہ برہان الدین نے جواز کا فتویٰ دیا ، اس کے علاوہ جواز کا فتویٰ حنفیوں اور مالکیوں نے بھی دیا ہے ۔۔۔ ‘‘

﴿فتاوی خیریه علی ھامش تنقیح الحامدیه ج: ٢ ص: ٢٨٣﴾


اس عبارت سے یہ معلوم ہوا کہ جب بعض علماءِ احناف اور بعض علامءِ مالکیہ سے وجد کے بارے میں پوچھا گیا تو سب نے جواز پر فتویٰ دیا۔ اسی طرح امام جلال الدین سیوطی رحمتہ اللہ تعالٰی علیہ جو کہ شافعی المسلک ہیں انہوں نے بھی جواز بلکہ استحباب کا حکم دیا ، ملاحظہ کیجئے امام جلاالدین سیوطی رحمتہ اللہ علیہ کا فتوی۔



امام جلاالدین عبدالرحمٰن سیوطی رحمتہ اللہ علیہ :
محدث، مفسر ، فقیہ اور ادیب و صوفی حضرت امام جلاالدین سیوطی رحمتہ اللہ تعالٰی علیہ جو کہ چاروں مذاہب میں مقبول ہیں خود شافعی ہیں اپنی کتاب الحاوی للفتاوی میں تصوف کے متعلق باب میں وجد ، رقص ، سماع اور مجالس ذکر ، قیامِ ذکر کے اثبات میں یوں رقمطراز ہیں کہ :

’’ مسئلہ 
: صوفیاء کرام رحمتہ اللہ تعالٰی علیہم کی ایک جماعت جو کہ ذکر کیلئے جمع ہوئے ہوں اور پھر ایک شخص مجلس سے ذکر کرتے ہوئے کھڑا ہو جائے اور انوار الہیہ کے ورود کی وجہ سے یہ حالت اس سالک پر مداومت سے طاری ہو جائے پس کیا یہ کام اس سالک کیلئے جائز ہے یا نہیں ؟ خواہ اختیار کیساتھ اٹھے یا بے اختیار ہو کر کھڑا ہو جائے۔ اور کیا اس سالک کو اس حال سے منع کرنا چاہئے یا نہیں ؟ اور اسے زجر دینا چاہئے یا نہیں ؟
الجواب اس سالک پر اس حال میں کوئی اعتراض اور انکار نہیں۔ شیخ الاسلام سراج الدین بلقینی رحمتہ اللہ علیہ سے یہ سوال پوچھا گیا تھا تو انہوں نے جواب دیا کہ اس سالک پر کوئی اعتراض نہیں۔ اور کسی کو جائز نہیں کہ اس سالک کو اس حال سے منع کرے بلکہ منع کرنے والے کو تعزیر ﴿سزا﴾ دینا لازم ہے۔ علامہ برہان الدین انباسی رحمتہ اللہ علیہ نے بھی اس طرح جواب دیا اور یہ بھی فرمایا کہ یہ سالک صاحب الحال مغلوب ہے اور اس سے انکار کرنے والا محروم ہے منکر نے تواجد کی لذت حاصل نہیں کی اور عشق حقیقی کی شراب منکر کو نصیب نہیں حتٰی کہ علامہ موصوف نے اپنے جواب کے آخر میں فرمایا ہے کہ : خلاصہ یہ ہے کہ صوفیہ کرام کے حال کو تسلیم کرنے میں سلامتی ہے اسی طرح بعض آئمہ احناف اور مالکیہ نے بھی یہ جواب دیا ہے تمام کے تمام نے اس سوال کا جواب اتفاقی طور پر دیا ہے جس میں کسی مخالفت کی گنجائش تک بھی نہیں ﴿میں کہتا ہوں﴾ کہ کس طرح کھڑے ہو کر ذکر سے منع کیا جائے گا ؟

حلانکہ اللہ تعالٰی نے فرمایا ہے کہ : ﴿ عاقل لوگ وہ ہیں جو کھڑے ہو کر ذکر کرتے ہیں اور بیٹھنے ، لیٹنے میں بھی اللہ تعالٰی کا ذکر کرتے ہیں ﴾ اسی طرح حضرت عائشہ صدیقہ رضی اللہ عنہا بھی فرماتی ہیں کہ : رسول اکرم ﷺ تمام اوقات میں اللہ تعالٰی کا ذکر کرتے تھے اسی طرح اگر قیام کیساتھ اس سالک نے رقص دوڑ یا چیخ و پکار وغیرہ ﴿مثلاً کپڑے پھاڑنا ، دوڑنا اور آہ و اف وغیرھا﴾ بھی پیوست کیا تو تب بھی کوئی انکار اور اعتراض ان پر نہیں کیونکہ یہ حالت شہود اور مواجید کی لذت کی وجہ سے سالکین پر طاری ہوتی ہے اور حدیث شریف میں حضرت جعفر بن ابی طالب رضی اللہ تعالٰی عنہ کا رقص نبی اکرم ﷺ کے سامنے ثابت ہے جب کہ نبی اکرم ﷺ نے ان سے مخاطب ہو کہ فرمایا کہ آپ اخلاق اور شکل و شباہت میں مجھ سے مشابہ ہیں ، پس اس خطاب کی لذت کی وجہ سے ان پر رقص طاری ہو گیا اور نبی اکرم ﷺ نے ان پر کوئی انکار ظاہر نہیں فرمایا۔پس یہ حدیث تقریری صوفیہ کرام کے رقص اور وجد و تواجد میں اصل اور دلیل ہے کیونکہ حقیقی صوفیہ کرام پر بھی یہ حالات مواجید کی لذت کی وجہ سے طاری ہوتے ہیں۔ اسی طرح مجالس ذکر اور محافل سماع میں قیام اور رقص بھی جائز اور ائمہ کبار سے ثابت ہیں جن میں شیخ الاسلام عزیز الدین بن عبدالسلام کا نام مبارک سر فہرست ہے۔۔۔ ‘‘

﴿ الحاوی للفتاوی ج: ٢ ص: ٢٢٤ ﴾


علامہ عبدالوہاب شعرانی رحمتہ اللہ علیہ :
علامہ عبدالوہاب شعرانی رحمتہ اللہ علیہ اپنی کتاب انوار القدسیہ میں تحریر فرماتے ہیں کہ :

’’ سیدنا علامہ یوسف عجمی رحمتہ اللہ علیہ نے بھی فرمایا ہے کہ مشائخ نے سالک کیلئے جو آداب ذکر بیان فرمائے ہیں تو وہ مختار اور غیر مجزوب سالک کے حق میں ہیں۔ اور مسلوب الاختیار سالک اپنے اسرار وارادہ کیساتھ رہنے دو کیونکہ بے اختیار ہو کر اس کی زبان پر بھی اللہ ، اللہ ، اللہ ، اللہ جاری ہو جاتا ہے اور کبھی اس کی زبان پر بے اختیار بے اختیار ہو ہو ہو ہو جاری ہو جاتا ہے اور کبھی لا لا لا لا اور کبھی آہ آہ آہ آہ اور عا عا عا عا اور آ آ آ آ اور کبھی ہا ہا ہا ہا اسکی زبان پر جاری ہو جاتا ہے اور کبھی اس کی زبان پر بغیر حروف کے آوازیں جاری ہو جاتی ہیں ۔ اور کبھی بعض کو بعض سے خلط کر کے چیختا ہے ۔ ﴿مثلاً اللہ ہو ہو اللہ ہو عا عا آ آ ہو آ 
لا وغیرھا اس کی زبان پر جاری ہو جاتا ہے ﴾ اور اس کے لئے ادب یہ ہے کہ وارد کو تسلیم ہو گا پس جب وارد ختم ہو جائے تو اسکے لئے بھی آداب یہ ہے کہ سکون وقار سے بیٹھ کر کچھ نہ کہے۔۔۔۔ ‘‘

اور انوار القدسیہ کی جلد دوئم کے صفحہ ٨۲ سے لیکر ٨٩ تک بھی حضرت امام شعرانی رحمتہ اللہ علیہ نے وجد کے ثبوت میں دلائل پیش کیے ہیں۔

﴿انوار القدسیه ج: ۱ ص: ٣٩﴾


حضرت اسماعیل حقی بروسی حنفی رحمتہ اللہ علیہ :
اسی طرح مفسر جلیل جامع بین الظواھر والبواطن عارف باللہ حضرت اسماعیل حقی حنفی رحمتہ اللہ علیہ نے تفسیر روح البیان میں سب سے پہلے معترضین کے اعتراضات نقل کئے اور آخر میں فرمایا :

’’ فقیر کہتا ہے کہ اس بات میں کوئی شک نہیں کہ قباحت اور جرح ان لوگوں پر کیا جاتا ہے جو کہ ریا کار اور باطل دعوی کرنے والے ہوں۔ اپنے آپ پر جو لوگ کنٹرول کرنے کی قدرت رکھتے ہیں جیسا کہ اس حدیث مبارکہ میں حضور ﷺ نے ارشاد فرمایا ہے ، حدیث کے الفاظ یہ ہیں :
جو لوگ اللہ کے عاشق ہوتے ہیں اور اپنے عشق کا اظہار نہیں کرتے اور اپنے عشق کو اپنے دل میں چھپانے کی قدرت رکھتے ہیں اور مر جاتے ہیں ، شہید ہوتے ہیں۔ جو لوگ اپنی حالت پر غالب ہوتے ہیں تو ان لوگوں کے لئے ادب یہ ہے کہ ناجائز حرکت نہ کریں، جو حال پر غالب نہیں ہوتے اور اہل حق ہوتے ہیں اہل باطل نہیں ہوتے، ان سے قلم اٹھا لیا جاتا ہے اور ان کی حرکت پر ان کو معذور سمجھا جاتا ہے اس لئے کہ یا تو یہ مبتدی ہوتے یا متوسط ہوتے ہیں، منتہی نہیں۔ اسلئے کہ منتہی جن باتوں پر قادر ہوتا ہے ۔ غیر منتہی ان پر قادر نہیں ہوتا۔ مبتدی اور متوسط کی حالت منتہی کی طرح نہیں۔ صحابہ کرام اور صحابہ کی مثل ہر حالت اور مقام میں ادب کا لحاظ ان کیلئے ضروری ہے قوتِ تمکین کے ساتھ بلکہ شدتِ تلوین فی التمکین میں خود قابو رکھتے ہیں یعنی منتہی پر عام لوگوں کا قیاس نہیں کیا جا سکتا۔ بہت سارے اہل تلوین وہ کام کرتے ہیں جو اہل تمکین نہیں کرتے اسلئے اہل تمکین خود پر قابو رکھتے ہیں جب کہ اہل تلوین پر حال غالب ہوتا ہے اور اختیار ان کا سلب ہو چکا ہوتا ہے تو عقل مند حق کی راہ سے بغیر ریا اور دعوی کوشش نہ کرے اور ہر وہ کام جس کا تعلق فتوی یا تقوی سے ہو ادب کا لحاظ رکھے اور اپنے اوپر لازم کرے کہ ظاہر اور باطن میں اپنے آپ کو عیب سے محفوظ رکھے اور ان چیزوں سے جن میں شک اور میل پیدا ہوتا ہو تو اس سے اپنے آپ کو بچائے ۔۔۔۔ ‘‘

اسی طرح علامہ اسماعیل حقی رحمتہ اللہ علیہ نے روح البیان ج: ۲ ص: ١٦٧ سورۃ آل عمران میں ذکر بلجہر ، وجد و حال مضبوط اور مدلل دلائل کے ساتھ ثابت کیا ہے ۔ تفصیلی عبارت وہاں ملاحظہ کریں ۔۔

﴿تفسیر روح البیان ج: ٨ ص ١٠٠ تا ١٠١ سورۃ زمر آیت ٢٣﴾ 

خلاصہ یہ ہوا کہ جو لوگ مغلوب الحال نہیں ہوتے ان کو خلاف شرع حرکت ہر گز نہیں کرنی چاہئے اور جو لوگ مغلوب الحال ہو جائیں تو ہر قسم کی حرکات ان سے صادر ہوتی ہیں ، ہر حال میں ایسے لوگوں کی حرکات پر کوئی اعتراض نہیں کیونکہ اس وقت وہ اپنے اوپر قابو نہیں پا سکتے ۔ اور اگر بندے پر حال غالب نہ ہو تو اسکو کوئی ایسی حرکت نہیں کرنی چاہئے جو خلافِ شرع ہو ۔ ہاں شریعت کے مطابق حرکات تواجد محمودہ میں کر سکتا ہے ۔



علامہ محمود الوسی بغدادی رحمتہ اللہ علیہ :

جلیل القدر مفسر محقق مفتی بغداد حضرت علامہ مولانا محمود الوسی حنفی نقشبندی مجددی خالدی رحمتہ اللہ علیہ تفسیر روح المعانی میں منکرین کو جواب دیتے ہوئے جو کہ نماز کی حالت میں وجد کا انکار کرتے تھے فرماتے ہیں :
’’ میں نے بعض منکرین سے سنا ہے وہ کہتے ہیں اگر یہ حالت عقل و شعور کی موجودگی کے با وجود عارض ہو جائے تو یہ بےادبی ہے اور اس سے نماز ٹوٹ جاتی ہے اور اگر یہ حالت عقل و شعور کی عدم موجودگی میں آ جائے تو وضو ٹوٹ جاتا ہے اور ہم دیکھتے ہیں کہ وہ وضو نہیں کرتے۔میں ان کو جواب دیتا ہوں جن کا خیال ہے کہ وجد اور اس حالت سے نماز اور وضو دونو ٹوٹ جاتے ہیں کہ یہ حالت غیر اختیاری ہے عقل و شعور کے ساتھ اس کی مثال کھانسی یا چھینک جیسی ہے اس لیے اس سے نہ تو نماز باطل ہوتی ہے اور نہ وضو ٹوٹتا ہے۔ اور شوافع نے کہا ہے کہ اگر نمازی پر ہنسنا غالب آجائے تو اس کی نماز فاسد نہیں ہے اور نمازی اس صورت میں معذور سمجھا جائیگا ۔ بعید نہیں کہ تجلیات غیر اختیاریہ کے آثار کو بھی اس کے ساتھ ملحق کیا جائے اور عدم فساد صلٰوۃ پر حکم کیا جائے اور کسی چیز کے غیر اختیاری ہونے سے اس چیز کا غیر شعوری ہونا لازم نہیں کیونکہ مرتعش کی حرکت غیر اختیاری ہے اور غیر شعوری نہیں ہے بلکہ اس کے ساتھ عقل اور شعور موجود ہوتے ہیں اور یہ تو ظاہر باہر کا معاملہ ہے ۔ پس اس سے انکار کرنے کی کوئی گنجائش نہیں۔۔۔ ‘‘


(تفسیر روح المعانی سورة الأعراف آیت١٥٥)

وھابی ان کی عبارات بھی پیش کرتے ہیں جن میں انہوں نے جعلی صوفیاء کے ناچ گانے کا رد کیا ہے جبکہ آپ دیکھ سکتے ہیں کہ یہ تو نماز اور نماز کے علاوہ بھی وجد کو جائز کہتے ہیں بلکہ منکرین کو جواب بھی دیتے ہیں ۔ اور وھابی شائد یہ نہیں جانتے کہ یہ بھی سلسلہ نقشبندیہ مجددیہ کے بزرگوں میں سے ہیں، ایک صوفی۔ اور نہ صرف یہ بلکہ کئی فقہاء جن کے حوالے وھابی دیتے ہیں اسی سلسلہ کے بزرگ گزرے ہیں الحمد للہ میں بھی اسی سلسلہ میں مرید ہوں ۔۔۔


امام غزالی رحمتہ اللہ علیہ :امام غزالی رحمتہ اللہ علیہ نے احیاءالعلوم الدین جلد ٢ میں پورا باب قائم کیا ہے وجد و تواجد اور سماع کے موضوع پر اور قرآن و حدیث سے دلائل دیے ہیں ۔ لیکن چونکہ تفصیل کے ساتھ ان کی کتاب سے حوالے نہیں دے سکتا اس لیے ان کی کتاب کیمیائے سعادت سے صرف دو ٢ اقوال ان کے قوٹ کر رہا ہوں ایک میں منکرین کو ان کی طرف سے جواب ہے جبکہ دوسرے میں وجد کے مباح ہونے پر ثبوت ہیں ۔

۱﴾ یعنی جو شخص سماع اور وجد کے اثرات سے انکار کرتا ہے تو یہ اس کی اپنی کوتاہ علمی ہے ۔ اس شخص کے پاس وہ علم نہیں جسکے ذریعے وہ صوفیاء کرام کے احوال جان سکے ایسے شخص کی مثال اس ہجڑے کی طرح ہے جو اپنی نامردی اور قوت شہوت کی عدم موجودگی کے باعث لزت جماع سے انکار کرے۔
﴿کیمیائے سعادت رکن دوم ص ١٩٨﴾


۲﴾ امام غزالی رحمتہ اللہ علیہ فرماتے ہیں کہ رقص مباح ہے کیونکہ حبشی لوگ مسجد نبوی ﷺ میں رقص کرتے اور حضرت عائشہ صدیقہ رضی اللہ عنہا اسے دیکھنے جاتی تھیں اور جب حضور ﷺ نے حضرت علی رضی اللہ عنہ سے فرمایا کہ :
تم مجھ سے ہو اور میں تم سے ہوں تو حضرت علی رضی اللہ عنہ نے خوشی کے مارے رقص شروع کر دیا۔ جو لوگ وجد کو حرام جانتے ہیں وہ غلطی پر ہیں۔ کیونکہ اس کی انتہا مستی ہے جبکہ مستی بھی حرام نہیں۔

﴿کیمیائے سعادت رکن دوم ص ۲٠٥﴾

مزید امام غزالی رحمتہ اللہ علیہ کی احیاء العلوم الدین جلد دوم ٢ کا مطالعہ کیجئے ۔


قاضی ثناء اللہ پانی پتی رحمتہ اللہ علیہ :قاضی ثناء اللہ پانی پتی رحمتہ اللہ علیہ فرماتے ہیں ، جب برکات اور تجلیات کی بارش بکثرت ہوتی ہے اور صوفی کا حوصلہ تنگ اور استعداد کمزوری ہوتی ہے تو بیہوشی کی حالت طاری ہو جاتی ہے صحابہ رضی اللہ عنہ کے ظرف وسیع تھے اور صحبت رسول ﷺ کی برکت سے استعداد قوی ہوتی تھی۔اس کے باوجود برکات کی کثیر بارش کے ان پر بیہوشی طاری نہیں ہوتی تھی۔ صحابہ کے علاوہ دوسروں کو یہ چیز میسر نہیں اس لیے دو وجوہ سے ان پر بے ہوشی طاری ہو جاتی ہے ۔ یا نزول برکات ہی کم ہوتا ہے یا ان کا ظرف تنگ ہوتا ہے اور حوصلہ میں سمائی نہیں ہوتی ۔

﴿تفسیر مظہری ج ١٠ص ۱٦٣﴾۔




حضرت شاہ ولی اللہ محدث دہلوی رحمتہ اللہ علیہ :
شاہ ولی اللہ محدث دہلوی رحمتہ اللہ علیہ صوفیاء کے وجد کو ثابت کرتے ہوئے فرماتے ہیں:

’’ بعض صوفیاء عظام پر جب خوف الٰہی غالب آجاتا ہے تو وہ رونے لگتے ہیں ۔ اور ان کے اعضاء حرکت کرتے ہیں جیساکہ :
حضور پاکﷺ جب رات کو نماز پڑھتے تو آپ ﷺ کے سینے مبارک سے ہانڈی کے جوش مارنے کی آواز آتی۔ ‘‘

﴿حجتہ اللہ البالغہ ج: ٢ ص: ٩٩﴾



شیخ عبدالحق محدث دہلوی رحمتہ اللہ علیہ :

منقول ہےکہ حضرت شیخ عبدلقادر جیلانی رضی اللہ عنہ جب وعظ کے لیے کرسی پر تشریف فرما ہو تے تقریر انواع علوم پر ہوتی تھی ۔ حاضرین حضرت شیخ رضی اللہ عنہ کی عظمت اور ہیبت کی وجہ سے خاموش بیٹھے رہتے۔ اچانک آپ رضی اللہ عنہ فرماتے ﴿مضی اتعال و عطفنا بالحال﴾ اس جملے کے ساتھ ہی حاضرین پر وجد طاری ہو جاتا کچھ رونے لگتے، بعض کپڑے پھاڑنے لگتے اور بعض بیہوش ہو کر جان دے دیتے۔

﴿شیخ عبدالحق محدث دہلوی، اخبار الاخیار﴾



حضرت شاہ عبدالعزیز محدث دہلوی رحمتہ اللہ علیہ :
اسی طرح شاہ عبدالعزیز محدث دہلوی حنفی رحمتہ اللہ علیہ نے تفسیر عزیزی میں حضرت خوجہ باقی باللہ حنفی رحمتہ اللہ علیہ مرشد امام ربانی کا واقعہ نقل کیا ہے کہ:

’’ ایک نانبائی یا نان فروش نے حضرت باقی باللہ رحمتہ اللہ علیہ کے مہمانوں کیلئے کھانا پکایا حضرت باقی باللہ اس طرز عمل سے نہایت خوش ہوئے اور نان فروش سے فرمایا کہ جو مانگنا چاہتے ہو مانگو۔ اس نان فروش نے کہا کہ آپ کی طرح بننا چاہتا ہوں حضرت باقی باللہ رحمتہ اللہ علیہ اس کو اندر لے گئے اور اس کو توجہ اتحادی فرمائی۔

تو حضرت محدث دہلوی رحمتہ اللہ علیہ فرماتے ہیں کہ :
مجبورًا حضرت باقی باللہ رحمتہ اللہ علیہ اسے خانقاہ کے اندر لے گئے اور توجہ اتحادی فرمائی۔ باہر آنے پر حضرت خواجہ باقی باللہ رحمتہ اللہ علیہ اور نان بائی کی صورت ایک جیسی نظر آ رہی تھی۔ لوگوں کے لئے ان کے درمیان فرق کرنا مشکل ہو گیا تھاْ اتنا فرق اندازہ سے ہوتا کہ حضرت خواجہ ہوش میں تھے اور نان بائی بے ہوش اور مجذوب آخر تین دن بعد اسی بے ہوشی میں دارالفناء سے دارالبقاء کی جانب رحلت فرما گئے۔ ان للہ و انا الیه راجعون۔۔۔۔ ‘‘

﴿تفسیر عزیزی ج: آخر ص: ٣٣٨ ، سورۃ علق﴾



اعلیحضرت امام احمد رضا خان رحمتہ اللہ علیہ :
یہاں تک کہ حضور پر نور عظیم البرکت امام اہل سنت قاطع بدعت مجدد دین و ملت اعلٰی حضرت شاہ احمد رضا خان محدث بریلوی رحمتہ اللہ علیہ وجد و تواجد کے بارے میں فتاوی رضویہ شریف میں فرماتے ہیں :

’’ تواجد یعنی اہل وجد کی صورت بنانا اگر معاذ اللہ بطورِ ریا ہے تو اس کی حرمت میں شبا نہیں کہ ریا کیلئے تو نماز بھی حرام ہے اور اگر نیت صالح ہے تو ہر گز کوئی وجہ ممانعت نہیں۔ ‘‘

﴿فتاوی رضویہ ج: ١٠ ص: ٤٤٥ ۔ مطبوعہ المجدد احمد رضا اکیڈمی﴾


اعلٰی حضرت رحمتہ اللہ علیہ کا ایک اور فتوا ملاحظہ فرمائیے جس میں انہوں نے بھی اصلی وجد کو جائز کہا اور ریا کاری کو حرام :



﴿احکام شریعت ج: ٢ ص: ٢٧﴾

سبحان اللہ!! اب وھابی کہاں چھپیں گے ؟ جن علماء نے جعلی رقص پر فتوے دیے ہیں وہ خود ہمارے اپنے اہل سنت والجماعت کے فقہاء اور علماء ہیں ۔ اور وھابی انہی کی نفی والی عبارات صوفیاء کرام پہ چسپا کے لوگوں کو دھوکا دینے کی کوشش کرت ہیں۔ الحمدللہ علماء اہل سنت والجماعت جو کہ بے شک علماء حق ہیں انہوں نے ریا اور جعلی صوفیاء کے رقص اور ناچ گانے کو حرام کہا ہے جبکہ اصلی صوفیاء کے وجد کو جائز کہا ہے اس کے برعکس وھابیوں کے ناصر الدیں البانی نے عورتوں کا اپنے شوہر اور غیر عورت کے سامنے دنیاوی غرض سے رقص کرنے کو جائز کہا ہے ۔

یعنی جو اللہ اور اللہ کے حبیب ﷺ کی محبت میں بے اختیار ہو کر وجد و رقص کرے اس کو وھابی ناجائز کہیں اور اپنی عورتوں کے رقص کو دوسری عورتوں کے سامنے جائز کہیں ۔
کیا یہ وھابیوں کی منافقت نہیں ؟؟ انشاء اللہ آگے عبارت اور اس کا فتوی پیش کیا جائے گا ۔۔ 



نماز کے اندر وجد 

اللہ سے ڈرنے والے عارفوں کا وجد اور حال بہت سارے دلائل کے ساتھ ثابت ہے اور ان کی بہت ساری اقسام میں سے اللہ کا ذکر، تلاوت قرآن اور قرآن کریم کی سماعت کے وقت وجد اور حال کی کیفیات وارد ہوتی ہیں۔ چونکہ نماز اللہ کے ذکر اور تلاوت قرآن کریم پر مشتمل ہے تو نماز کی حالت میں یقیناً وجد اور حال کی کیفیت طاری ہو جاتی ہے۔ لہذا وجد و حال خاشعین پر نماز کی حالت میں یا نماز سے باہر دونوں صورتوں میں جائز بلکہ ثابت ہے۔

ہدایہ شریف میں ہے :
اگر نمازی نے نماز میں آہ کی یا اوہ کیا یا اتنا رویا کہ اس کا رونا حروف پر مشتمل ہوجائے تو پس اگر یہ حالت جنت یا دو زخ کے خوف کی وجہ سے طاری ہوئی تو نماز فاسد نہیں ہو تی کیونکہ یہ خشوع پر دلالت کرتی ہے اور اگر دنیاوی درد یا مصیبت کیوجہ سے یہ حالت ہو جائے تو نماز فاسد ہو جاتی ہے کیونکہ اس میں بے چینی اور افسوس کا اظہار ہے ۔

﴿ھدایۃ ج: ١ ص: ١٢٠﴾


کفایه شرح ھدایه علی ھامش فتح القدیر پر اسطرح لکھا ہے کہ:
ام المومنین حضرت عائشہ صدیقہ رضی اللہ تعالٰی عنہا سے نماز کے دوران رونے کے بارے میں سوال کیا گیا تو انہوں نے فرمایا کہ اگر اللہ کے خوف سے ہو تو نماز فاسد نہیں ہوتی اگر دنیاوی درد یا مصیبت کی وجہ سے ہو تو نماز فاسد ہو جاتی ہے ۔

﴿
کفایه شرح ھدایه علی ھامش فتح القدیر ج: ١ ص: ٣٤٢



اسی طرح بحر العلوم واقف مزاہب اربعہ حضرت علامہ عبدالرحمٰن جزیری رحمتہ اللہ علیہ اپنی کتاب الفقہ المذاہب اربعہ پر تحریر فرماتے ہیں :

نماز میں آہ اوہ اف کنا اور اسی طرح رونا کہ حروف مسموعۃ پر مشتمل ہوں تو یہ چیزیں نماز کو فاسد کرتی ہیں مگر جب یہ حالت اللہ کے خوف کی وجہ سے صادر ہو یا ایسے مریض کیوجہ سے ہو جس میں حالت مذکورہ کے منع کرنے کی طاقت نہ ہو تو پھر نماز فاسد نہیں ہوتی اور یہ حکم مذکورہ بابت خشیت حنفیہ ، مالکیہ اور حنابلہ کے مابین متفقہ ہے ۔۔ ﴿یعنی نماز فاسد نہیں ہوتی﴾

﴿
الفقہ المذاہب اربعہ ج: ١ ص: ٣٠٠﴾



اسی طرح فتاوی تاتارخانیہ پر علامہ علاؤ الانساری رحمتہ اللہ تعالٰی علیہ فرماتےہیں:

اگر کسی نے نماز میں آہ ، اوہ کی یا رویا اور اس کا رونا مرتفع ﴿اونچا﴾ ہو گیا اور فتاوی خانیہ میں ہے کہ مرتفع رونا یہ ہے کہ اس کی وجہ سے حروف حاصل ہو جائیں پس اگر یہ حالت جنت اور دوزخ کی یاد کی وجہ سے طاری ہو جائے تو نماز تام اور کامل ہے اور اگر دنیاوی درد اور مصیبت کی وجہ سے طاری ہو تو اس کی نماز فاسد ہو گی۔ یہ امام ابو حنیفہ رحمتہ اللہ تعالٰی علیہ اور امام محمد رحمتہ اللہ تعالٰی علیہ دونوں کا قول ہے۔

﴿فتاوی تاتارخانیہ ج: ۱ ص: ٥٧٩﴾

چند عبارات لکھ دی ہیں باقی کا صرف حوالہ دے دیتا ہوں لیکن اگر ضرورت پڑی تو وہ بھی ایڈ کر دی جایئں گی 

فتح القدیر شرح ہدایہ ج: ١ ص: ٣٢٦
عنایہ شرح ہدایہ ج: ١ ص: ٣٤٥
شیخ زین الدین ابن نجیم: بحر الرائق ج : ٢ ص: ٣ سے ٤
شیخ احمد طحطاوی: مراقی الفلاح ص: ١٧٤
فتاوی عالمگیری ج: ١ ص: ١٠٠
فتوی بزازیہ علی ھامش عالمگیری ج : ۱ ص ١٣٢
تفسیر روح المعانی ج: ٣ حصہ: ٩ ص:٨٦
علامہ شامی : ردمختار، ج: ١ ص: ٤١٦
علامہ حصفکی حنفی : درمختار ، ج: ١ ص: ٤١٦



الحمدللہ اب تک پڑھنے والوں کو وجد کے جائز ہونے اور منکرین کے دھوکہ دینے کا علم ہو گیا ہو گا ۔ لہذا اب یہاں تک میں دلائل دینے ختم کرتا ہوں اور اب ہم کچھ وھابیوں کو ایکسپوز کریں گے ۔ انشاءاللہ عزوجل
لیکن یہ بھی بتاتا چلوں میں نے تمام دلائل پوسٹ نہیں کئے اور کرنا بھی بہت مشکل ہے کیونکہ اسکے لئے بہت وقت چاہئے لیکن اگر ضرورت پڑی تو مزید دلائل ایڈٹ کر کے ڈال دیے جائیں گے ۔ اور ابھی سکین پیجز بھی نہیں لگا رہا بعد میں انشاء اللہ کچھ سکین پیجز بھی لگا دئے جائیں گے۔

قرآن سے دلائل میں آخری ٢ دو آیات کی تفسیر پیش نہیں کیں صرف حوالہ دیا ہے کیونکہ عبارات ذرا طویل تھیں سوچا کے بیچ میں سے کچھ کچھ لکھوں لیکن پوری عبارت لکھے بغیر سمجھانا ذرا مشکل تھا۔ لیکن ان کی تفسیر آپ آن لائن چیک کر سکتے ہیں بلخصوص تفسیر مظہری اردو میں بھی موجود ہے نفس اسلام پر جلد سوم صفحہ ٤٦٨ / 486 کا مطالعہ کریں ۔


اس آرٹیکل میں اگر کوئی غلطی ہوئی ہو کسی چیز میں تو میں اللہ تعالٰی سے توبہ کرتا ہوں اور آپ سے بھی معافی چاہتا ہوں ۔ جاہل سا بندہ ہوں معاف فرما دیجئے گا اور میری اصلاح فرما


دیوبندی رایونڈی تبلیغی وھابی


ا﴾ عطاء اللہ شاہ بخاری :
شورش کاشمیری اپنی کتاب سید عطاءُ اللہ شاہ بخاری سوانح و افکار میں عبدالمجید کے حوالے سے تحریک خلافت کے زمانے میں انکے جیل میں معمول بیان کرتے ہوئے لکھتے ہیں:



﴿سید عطاءُ اللہ شاہ بخاری سوانح و افکار ص: ٨٢﴾
دیکھئے تو یہ دیوبندی وھابی ویسے تو صوفیاء کی ویڈیوز اپلوڈ کر کے مزاق اڑاتے ہیں اور اپنے گھر کے حالات پتہ ہی نہیں ۔ دیکھیں تو ذرا اگر ہمارے صوفیاء حالت وجد میں رقص کریں یا تواجد کریں تو کہتے ہیں ’’ یہ کس جگہ اسلام میں ہے ‘‘ اور اپنے اکابرین جیلوں میں حال کھیلتے تھےاور پوری پوری رات مٹکیاں اور تالیاں بجا کر جیلوں میں لوگوں کو تنگ کرتے تھے ۔
دیو کے بندروں یہ کیا ہے ؟
تمہارے اکابرین اگر جان بوج کر تالیاں بجائیں اور حال کھیلیں اور مٹکی بجایں تو جائز اور اگر اولیاء اللہ اور سالکین وجد میں آ جایں یا شریعت کے اندر رہتے ہوئے تواجد کریں تو اسلام میں کہاں ہے یہ چیز ؟

یا تو اپناے اکابرین پر بھی فتوے لگاؤ یا پھر ایسی شیطانی حرکتیں بند کرو ۔ نعتوں کو گانوں سے بدل کر مزاق اڑاتے ہو جاہلوں! ۔۔۔


٢﴾ دارالعلوم دیوبند میں وجد :

دیوبندیوں کے حکیم الامت اشرف علی تھانوی دیوبندی کی اشرف السوانح ص ٦٤ کے حوالے سے صاحب رہنمائے سالکین نے لکھا ہے :

’’ کہ دوران وعظ ان کے سامعین پر اکثر گریہ اور بعض پر وجد طاری ہوتا تھا کہ لوٹنے تڑپنے لگ جاتے تھے چناچہ مدرسہ دارالعلوم دیوبند کے بڑے جلسہ دستار بندی میں حضرت مولانا موصوف کے وعظ میں ایک صاحب پر اس قدر شدید کیفیت وجد طاری ہوئی کہ وہ کسی طرح فرو نہ ہوئی یہاں تک کہ وعظ کا مجمع ہی باطل درہم و برہم ہو گیا اور وعظ ناتمام ہی رہا۔ ‘‘

دیکھیں تو دارالعلوم دیوبند میں تو اتنا شدید کئی لوگوں کو وجد ہوتا تھا کہ پورا مجمع ہی درہم برہم کر دیتے تھے لیکن آج وجد کو دیکھ کے ناجانے کیوں یہ لوگ بیوقوفوں کی سی باتیں کرتے ہیں اور سوال کرتے ہیں۔ 


نیز اس کتاب کے ١٣٠ ،١٣١ میں مولانا خواجہ عزیز الحسن مجذوب صاحب نے دار العلوم کانپور کے ایک طالب علم کا واقعہ لکھا ہے کہ بوستان کے درس میں :

بہ مجنون کسے گفت کہ ایک نیک پے
چہ بودت کہ دیگر نیائی بے


اشعار سن کر وجد میں آ کر لا اله الا اللہ کا ورد کرتے ہوئے زور زور سے بھاگتے ہوئے بازار کی طرف نکل گئے جو ملتا اس سے یہی کہتے یہا تک کہ ہندووں سے بھی لا اله الا اللہ کہلوایا۔ نماز عصر کا وقت ہونے پر کہنے پر وضوع تو کر لیا اور نماز کے لئے کھڑے بھی ہوگئے لیکن نماز عجیب طرح کی پڑھی کہ بجائے اللہ اکبر کے آہ آہ کہتے تھے اور بجائے تلاوت کے عشقیہ اشعار پڑھتے تھے۔ حلانکہ اس سے قبل انہیں کبھی اشعار پڑھتے ہی نہ سنا گیا ۔ اس نماز میں انہوں نے سجدے بھی بے تعداد کئے رات بھی یہی کیفیت رہی دوسرے روز جب کانپور کے درویش میاں خاکی شاہ سے کیفیت سلب کرائی گئی تو رات کو خواب میں اس طالب علم کو رسول اللہ ﷺ کی زیارت ہوئی اور فرمایا کہ اس فقیر سے کہہ دینا کہ کیا تیری کم بختی آئی ہے کہ ایسی نعمت کو سلب کرتا ہے ؟ ‘‘۔

﴿ تلخیص رہنمائے سالکین : ص ١٣١، ١٣٢ ﴾

٣


اشرف علی تھانوییہ ثبوت میں نے جدالمختار بھائی کی پوسٹ سے لیا ہے ۔


۔






دیکھئے جس چیز کو دیوبندیوں کے اکابرین بھی مانتے تھے اور انکی کتابوں سے اس کے ثبوت ملتے ہیں ۔ آج کے دیوبندی اسکا مذاق اڑاتے ہیں ۔ دیوبندیوں تھانوی تو اس کے ثبوت میں دلائل دیتا ہے اور تم ہو کے مانتے نہیں؟
تو اب تھانوی کے بارے میں کیا خیال ہے ؟
__________________







INSHA’ALLAH IN FUTURE I WILL ADD MORE INFO ON IT
MAY ALLAH(SWT) GRANT US THE DEEDAR E MUSTAFA(PEACE BE UPON HIM) BA HALT E BEDARI! AMIIN!
                
COMPILED BY: MUHAMMAD REHAN SIDDIQUI

RECENT CONTENTS

Recent Posts Widget